اس آدمی نے بڑی کمپنی میں انتہائی پرکشش نوکری چھوڑ کر رکشہ چلانا شروع کردیا، لیکن ایسی وجہ بتادی کہ کوئی تصور بھی نہیں کرسکتا تھا

اس آدمی نے بڑی کمپنی میں انتہائی پرکشش نوکری چھوڑ کر رکشہ چلانا شروع کردیا، ...
اس آدمی نے بڑی کمپنی میں انتہائی پرکشش نوکری چھوڑ کر رکشہ چلانا شروع کردیا، لیکن ایسی وجہ بتادی کہ کوئی تصور بھی نہیں کرسکتا تھا

  

ممبئی (نیوز ڈیسک) آج کی دنیا میں ہر نوجوان اسی تگ و دو میں مصروف نظر آتا ہے کہ اعلیٰ تعلیم حاصل کر کے کسی بڑی ملٹی نیشنل کمپنی میں شاندار ملازمت حاصل کرلے لیکن بھارتی شہر ممبئی سے تعلق رکھنے والے ان صاحب کو دیکھئے، انہوں نے اعلیٰ تعلیم حاصل کی اور ایک مشہور ملٹی نیشنل کمپنی میں اعلیٰ عہدہ بھی حاصل کیا لیکن پھر ایک دن اچانک اس پرآسائش طرز زندگی کو چھوڑ کر آٹو رکشہ چلانا شروع کردیا۔

خلیج ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق ان صاحب کو اگر بھارت کا مشہور ترین آٹو رکشہ ڈرائیور کہا جائے تو بے جا نہ ہوگا۔ اپنی حیرت انگیز کہانی بیان کرتے ہوئے اس شخص نے بتایا کہ وہ ہندوستان یونی لیور میں ایک اچھے عہدے پر فائز تھے لیکن دفتری کام کی بندشوں سے جلد ہی اکتا گئے کیونکہ انہیں ہمیشہ لوگوں سے ملنے،پینٹنگ کرنے اور فوٹوگرافی کا شوق رہا تھا۔ وہ کہتے ہیں کہ ایک دن وہ صبح اٹھے تو دفتر جانے کی بجائے رکشہ چلانے کے لئے نکل کھڑے ہوئے اور اب اس بات کو چار دہائیاں گزرچکی ہیں اور وہ رکشہ ہی چلارہے ہیں۔

یہ صاحب کہتے ہیں کہ جب ان کے ساتھ سفر کرنے والے یہ جانتے ہیں کہ وہ اعلیٰ تعلیم یافتہ ہیں اور روانی سے انگلش بول سکتے ہیں تو وہ ہمیشہ یہ سوال کرتے ہیں کہ اس کے باوجود رکشہ کیوں چلارہے ہیں۔ وہ اس کا ہمیشہ یہی جواب دیتے ہیں کہ اعلیٰ تعلیم اور شاندار ملازمت آپ کو زندگی میں وہ خوشی نہیں دے سکتی جو آپ اپنی پسند کا کام کرنے سے حاصل کرسکتے ہیں۔ وہ کہتے ہیں کہ رکشہ چلانے کے دوران وہ روزانہ درجنوں نئے لوگوں سے ملتے ہیں، جب جی چاہے پینٹنگ کرتے ہیں اور فوٹوگرافی کرتے ہیں۔ وہ اپنے فوٹوگرافی کے شوق کی تکمیل میں کئی ممالک کا سفر بھی کرتے ہیں۔ ملٹی نیشنل کمپنی کی ملازمت کرتے رہتے تو شاید یہ آج بھی گمنام ہوتے لیکن رکشہ چلاکر یہ صاحب آج بھارت اور حتیٰ کہ بھارت سے باہر بھی شہرت پاچکے ہیں۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -