کورونا وائرس کے نتیجے میں لندن کی سیاحتی انڈسٹری کو 10ارب پاونڈ کے نقصان کا خدشہ ہے : صادق خان

کورونا وائرس کے نتیجے میں لندن کی سیاحتی انڈسٹری کو 10ارب پاونڈ کے نقصان کا ...
کورونا وائرس کے نتیجے میں لندن کی سیاحتی انڈسٹری کو 10ارب پاونڈ کے نقصان کا خدشہ ہے : صادق خان

  

برمنگھم  ( سبطین علی )لندن کےمیئر صادق خان نے حکومت کو خبردار کیا ہے کہ کورونا وائرس بحران کے نتیجے میں سیاحوں کے اخراجات میں کمی سے لندن 10.9 بلین پاؤنڈ سے محروم رہ جائے گا کیونکہ دارالحکومت میں سیاحوں کی تعداد  وبائی بیماری سے پہلے کی سطح سے بہت کم ہے۔ ان کا کہنا ہے کہبیرون ملک مقیم سیاح اس سال لندن میں شاپنگ اور سیاحت پر 7.4 بلین پاؤنڈ کم خرچ کریں گے ، جبکہ ملکی  سیاح 2020 کے آخر تک معمول کی سطح سے  تقریباً3.5 بلین پاؤنڈز کم خرچ کریں گے۔ لندن کے میئر نے کہا کہ اعداد و شمار سے ظاہر ہوا ہے کہ کل چانسلر کے  اعلان کردہ تازہ بیل آؤٹ اور سرکاری امدادی پیکیج اس کا مؤثر حل نہیں۔ انہوں نے خبردار کیا کہ لندن  کی سیاحت کا خاتمہ دارالحکومت میں کاروبار کو آنے والے کئی مہینوں تک معمول پر آنے کی امید کے بغیر چھوڑ دے گا۔ میئر لندن نے کہا  اس تجزیے سے دارالحکومت کے معاشی اور ثقافتی دل میں  بین الاقوامی سیاحوں  کے ذریعہ خرچ کی جانے والی رقم میں کمی کا پتہ چلتا ہے - جو شہر کے وسط میں ہر روز سفر کرنے والے کم مسافروں کے اثرات سے کہیں زیادہ ہے. "واضح طور پر ، اس کا مطلب یہ ہے کہ بہت سے کاروبار بند ہونے  اور ہزاروں ملازمتوں کے چھوٹ جانے کا خطرہ ہے ڈیٹا کمپنی اسپرنگ بورڈ کے مطابق ، لاک ڈاؤن کے دوران  ، 17 اکتوبر کو ختم ہونے والے ہفتے میں ، لندن کی دوکانوں میں گاہکوں کی تعداد میں 2.3 فیصد کی کمی واقع ہوئی ہے۔

دفتر برائے قومی شماریات (او این ایس) کے اعداد و شمار کے مطابق ، لندن نے گزشتہ سال تقریبا 22 ملین بیرون ملک سیاحوں کا خیرمقدم کیا۔ تازہ ترین اعدادوشمار سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ سال کے پہلے تین مہینوں میں  وبائی مرض کے سامنے سے پہلے بین الاقوامی سیاحت میں دارالحکومت میں 19 فیصد کمی واقع ہوئی ہے۔عالمی سیاحت اور ٹریول کونسل نے گذشتہ ماہ پیشن گوئی کی تھی کہ وبائی بیماری سے سب سے زیادہ متاثر ہونے والا یورپی شہر لندن ہوگا ، جس میں لندن شہر بین الاقوامی سیاحت سے ہونے والا سرمایہ  کھوئے گا - جو لندن میں خرچ ہونے والے ہر سات میں سے چھ پاؤنڈ کا ہے۔ 

صادق خان نے کہا میں عزم کر رہا ہوں کہ لندن کی معاشی بحالی اور حالیہ آنے والے سالوں میں مدد کرنے کے لئے میں اپنی پوری کوشش کروں گا۔ لیکن یہ شعبے اس وقت تک وبائی امراض سے پہلے والی  سطح کو برقرار نہیں رکھ پائیں گے جب تک کہ سیاح نمایاں تعداد میں واپس نہ آئیں - لہذا حکومت کو ملازمتوں کےختم ہونے سے  وسیع پیمانے پر ہونے والے نقصانات اور اس سے ہونے والی مالی پریشانیوں سے بچنے کے لئے تیزی سے اقدامات کرنا ہوں گے ،انہوں نے حکومت پر زور دیا کہ وہ نئے سال میں کاروباری نرخوں کی تعطیلات میں توسیع کے ساتھ ساتھ معیشت کو دوبارہ کھولنے کے لئے "فنکشنل" ٹیسٹ اور ٹریس سسٹم بھی تشکیل دے۔انہوں نے وزراء سے یہ بھی مطالبہ کیا کہ وہ سیاحوں کے لئے ڈیوٹی فری خریداری ختم کرنے کی تجاویزات کو مسترد کریں ، جس میں میئر نے کہا ہے کہ "وسطی لندن کے کاروبار کو ایک اور دھچکا لگے گا جو اس اسکیم سے فائدہ اٹھا  رہے ہیں"۔ یہ بات اس وقت ہوئی جب برطانیہ کے چانسلر رشی سنک نے ملک بھر میں ٹائیر 2 پابندیوں کے تحت کاروباروں اور  ملازمتوں میں تنخواہوں   کی امداد کا اعلان کیا تھا۔ لیکن  کاروباری اور صنعتی  شخصیات نے خبردار  کیا ہے کہ نئی اسکیم ملک بھر میں جو مالی بحران پیدا ہوا ہے کچھ خاص مدد نہیں کر ے گی۔

مزید :

برطانیہ -