بارش نہ ہونے کی وجہ سے تھر کے کسان بھی بدحالی کا شکار، اجناس کی قیمتیں بیج سے بھی گر گئیں

بارش نہ ہونے کی وجہ سے تھر کے کسان بھی بدحالی کا شکار، اجناس کی قیمتیں بیج سے ...
بارش نہ ہونے کی وجہ سے تھر کے کسان بھی بدحالی کا شکار، اجناس کی قیمتیں بیج سے بھی گر گئیں

  

عمرکوٹ(سید ریحان شبیر )دنیاکےتیسرے ریگستان  صحرائے تھر کےغریب تھری باشندوں کاواحد ذریعہ معاش مال مویشی کی تجارت اور تھرکی بنجرپیاسی زمین پرباران رحمت کانزول  ہوناہے, تھری باشندوں کی خوشحالی کےضامن یہاں کے کھیت ہیں جہاں پر اس وقت باجرے اور گوار کی فصلیں پک کر تیار ہوچکی ہیں تین ماہ قبل اگائے تھر کے کھیتوں میں اسوقت  ہریالی چھائی ہوئی ہے ,رواں سال بارشیں تاخیر برسنےکےباعث تھرکے صرف تیس فیصد حصے کو آباد کیا جاسکا ,بیج مہنگا ہونےکی وجہ سے تھری باسیوں نے سودپر قرضہ لےکر اپنے کھیت آباد کیےفصلوں کی کٹائی کا وقت آہ گیا تو منافع خوروں نے  خریداری کےوقت اپنےمن مانے   نرخ مقرر کردیےاس وقت مارکیٹ میں  بیج پچاس سے ساٹھ روپے کلو خرید اتھا  لیکن اس وقت مارکیٹ انہیں فصلوں کی خریداری ریٹ اڑتیس روپے  سے  چالیس روپے کلو میں خرید کی جارہی ہے۔

تھری کاشتکاروں کاشکوہ ستم ظریفی تویہ ہےکہ منافع خورتاجران غریب تھری باشندوں کی مجبوری سےفائدہ اٹھاکر   باجرے،گوار اور مونگ کی فصلیں مارکیٹ آنےلگء منافع خور اور ذخیرہ اندوز بھی سستےداموں اجناس خریدنے کیلئے تیاری کررہے ہیں  تھری کاشتکاروں نےحکومت سےمطالبہ کیاہےکہ حکومت سندھ جسطرح گندم خریداری مراکزقائم کرتی ہے اسطرح تھرکی فصلوں کی خریداری کےلیے مراکزقائم کیےجائیں۔ یہ امرقابل ذکرہےکہ تھرمیں کاشت کی یجانےوالی سبزیاں جن میں ٹنڈے،گوار،بھنڈی،بیگن،چبڑ،ککڑی، مرچ،اوردیگرسبزیاں،تمرچ،اوردیگرسبزیاں،تل،باجرہ،گوار،مونگ،موٹھ،اجناس،گھاس،وغیرہ کھانے پینےکی اشیاء  لذیذ اور ہر کمیکل اور کھاد سے پاک تھرے کےاجناس دنیا بھر میں مشھور ہیں تھرمیں پانی موت اور زندگی کا مسئلہ ہے۔

اس دور جدید میں جب انسان چاند پر پہنچ چکا ہے آج بھی تھرکےغریب تھری باشندے پینے کےصاف پانی کےلیےترس رہے ہیں تھر کے غریب لوگوں کا واحد ذریعہ معاش باران رحمت کا نزول ہےاور اسکے ساتھ مال مویشی کی تجارت ہے اگر تھر کی پیاسی  زمین پر مطلوبہ بارشیں ہوجائے تو تھر میں زندگی لوٹ آتی ہے اور اگر خدا نہ کریں اگرتھرمیں مطلوبہ بارشیں نہ ہوں تو تھر میں بدترین قحط سالی شروع ہوجاتی ہے تھرمیں قحط سالی کے دوران تھری باشندے اپنے بےزبان مال مویشیوں کےساتھ نقل مکانی پر مجبور ہوجائے ہیں۔

مزید :

کسان پاکستان -علاقائی -سندھ -عمرکوٹ -