صوبائی وزیر آبپاشی پانی چوری کی روک تھام کے حوالے سے جاری اجلاس

صوبائی وزیر آبپاشی پانی چوری کی روک تھام کے حوالے سے جاری اجلاس

لاہور ر( اپنے خبر نگار سے )صوبائی وزیر آبپاشی وچیئرمین پیڈامیاں یاور زمان نے کہا ہے کہ پانی چوروں اور آبیانہ ڈیفالٹرز کے خلاف کینال اینڈ ڈرینج ایکٹ میں لائی جانے والی ترامیم کی روشنی میں کارروائی عمل میں لائی جائے تاکہ کسان برادری کو طاقتور افراد کے استحصال سے محفوظ رکھا جا سکے۔ انہوں نے مزید کہا کہ تاوان کی رقم ادا نہ کرنیوالوں کے خلاف بھی محکمانہ ایکشنز تیز کئے جائیں۔یہ بات انہوں نے اپنے دفتر میں پانی چوری کی روک تھام کے حوالے سے جاری اجلاس کی صدارت کے دوران کہی ۔ اس موقع پر سیکرٹری آبپاشی کیپٹن (ر) سیف انجم ، ایڈیشنل سیکرٹری (آپریشن) چوہدری محمد اشرف، ڈپٹی سیکرٹری (آپریشن) ڈاکٹر محمد نعمان، ڈپٹی جنرل مینجر (ایڈمن) افضل انجم طورکے علاوہ پولیس اور ریونیو ڈپارٹمنٹس کے نمائندگان بھی شریک تھے۔ اجلاس میں صوبائی وزیر کو پانی چوری کی روک تھام کے حوالے سے کی جانے والی مشترکہ کاوشوں کی بابت آگاہ کیا گیا۔ صوبائی وزیر میاں یاور زمان نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ آبیانہ کی وصولی کے لئے سرگرمیاں تیز کرنے کے ساتھ ساتھ ڈیفالٹرز کی لسٹیں 15 اکتوبر تک مرتب کر لی جائیں۔

تا کہ سرکاری واجبات کی جلد وصولی ممکن ہو سکے۔ انہوں نے مزید ہدایت کی کہ آبیانہ ڈیفالٹرز کی لسٹیں مرتب کرنے کے بعد اُن کے نام وارہ بندی سے خارج کر دئیے جائیں۔ میاں یاور زمان نے پانی چوری کی روک تھام کے حوالے سے کہا کہ کینال اینڈ ڈرینج ایکٹ کی دفعہ 70 کی ترامیم کے تحت پانی چوری ناقابلِ ضمانت جرم بن چکا ہے ۔ انہوں نے اجلاس میں شریک پولیس کے نمائندہ کو ہدایت کی کہ پانی چوری میں ملوث افراد کے خلاف ایف آئی آرز درج کر کے ملزمان کو کینال مجسٹریٹس کے سامنے جلد پیش کرنے کے اقدامات کو یقینی بنایا جائے تا کہ پانی چوری کی قبیح رسم کا خاتمہ کیا جاسکے۔

مزید : میٹروپولیٹن 4


loading...