کیا تولیہ بیمار کرنے کا باعث بن سکتا ہے؟

کیا تولیہ بیمار کرنے کا باعث بن سکتا ہے؟
 کیا تولیہ بیمار کرنے کا باعث بن سکتا ہے؟

  


واشنگٹن(مانیٹرنگ ڈیسک)آپ کو یہ جان کر حیرت ہوگی کہ جو تولیہ آپ روزانہ نہانے کے بعد جسم خشک کرنے کے لیے استعمال کرتے ہیں، اس کے حوالے سے چند احتیاطیں اختیار نہ کرنا صحت کے لیے کتنا تباہ کن ثابت ہوسکتا ہے اور وہ انفیکشن کا باعث بن سکتے ہیں۔یہ انتباہ امریکا میں ہونے والی ایک طبی تحقیق میں سامنے آیا۔جی ہاں آپ کو اندازہ ہی نہیں ہوگا کہ تولیہ کتنے جراثیموں سے بھرا ہوا ہوتا ہے اور آپ کو کتنے دنوں کے بعد اسے دھونا چاہئے۔مشی گن یونیورسٹی اسکول آف پبلک ہیلتھ کی تحقیق کے مطابق نہانے کا تولیہ جراثیموں، جلد کے مردہ خلیات اور انسانی فضلے کا گھر بن سکتا ہے۔تولیہ جراثیموں کی افزائش کے لیے مثالی ثابت ہوتا ہے کیونکہ وہ گیلے، گرم اور قدرتی طور پر ہائیڈروجن کی ایک قسم کے حامل ہوتے ہیں۔جلد کے مردہ خلیات اور دیگر جسمانی ذرات جراثیموں کے لیے غذا کا کردار ادا کرتے ہیں۔تحقیق میں بتایا گیا جب بھی کسی تولیے کو استعمال کیا جاتا ہے تو اس میں بیکٹریا جمع ہونا شروع ہوجاتے ہیں، جن میں سے بیشتر صحت کے لیے نقصان دہ نہیں ہوتے کیونکہ وہ آپ کے جسم سے ہی تعلق رکھتے ہیں۔یہ ٹھیک ہے کہ ان میں سے بیشتر جراثیم آپ کو نقصان نہیں پہنچاتے کیونکہ وہ آپ کے جسم سے ہی تولیے میں آتے ہیں تاہم اگر وہی تولیہ دیگر افراد کے زیراستعمال ہوتا ہے تو پھر ضرور صحت کے لیے نقصان دہ ہوسکتا ہے۔

مزید : میٹروپولیٹن 4