جہانیاں بائی پاس پر عبدالغفور روڈ کی  تعمیر و مرمت کا منصوبہ منظور‘ عوام کی  فلاح و بہبود میرا مشن‘ نشاط احمد خان ڈاہا

   جہانیاں بائی پاس پر عبدالغفور روڈ کی  تعمیر و مرمت کا منصوبہ منظور‘ عوام ...

  

 خانیوال (نامہ نگار،نمائندہ پاکستان) ڈپٹی کمشنر آغا ظہیر عباس شیرازی کی خصوصی دلچسپی اور ایم پی اے نشاط احمد خان ڈاہا کی سفارش پر عوام کا دیرینہ مطالبہ پورا کرتے ہوئے(بقیہ نمبر3صفحہ 6پر)

 جہانیاں بائی پاس پر عبدالغفور روڈ کی تعمیر و مرمت کے کام کی منظوری دیدی گئی۔ منصوبہ کی منظوری دیتے ہوئے ڈپٹی کمشنر نے کہا کہ سڑک کی تعمیر و مرمت شوگر سیس فنڈ سے کی جائیگی 2 کلومیٹر سڑک کے منصوبہ پر ایک کروڑ 48 لاکھ روپے خرچ ہونگے۔ اس حوالے سے ڈپٹی کمشنر نے کہا ہے کہ سڑک کی تعمیر و مرمت سے آمدورفت میں دشواری کا دیرینہ مسئلہ حل ہوگا۔انہوں نے ہدایت کی ہے کہ منصوبہ میں اچھی کوالٹی کا میٹریل استعمال کیا جائے۔ایم پی اے نشاط احمد خان ڈاہا نے اس موقع پر کہا کہ سڑک کی تعمیر و مرمت کی منظوری کرواکر حلقہ کے عوام کا دیرینہ مطالبہ پورا کردیا ہے میں عوام کی فلاح و بہبود کے کام جاری رکھوں گا۔ یاد رہے کہ یہ روڈ خانیوال لودھراں ایکسپریس وے کو نیو جنرل بس سٹینڈخانیوال کے قریب اوور ہیڈ کے ذریعے خانیوال ملتان روڈ اور شامکوٹ انٹر چینچ سے ملتا ہے بہاولپور اور جہانیاں کی جانب سے آنیوا لے مسافر جوایم فور موٹر وے اور ایم 5موٹر وے پر فیصل آباد اور لاہور کے لیے سفر کرتے ہیں خانیوال شہر کے ذریعے یہ شارٹ راستہ ہے اور اس روڈ پریہ شہر کا انٹری پوائنٹ بھی ہے۔روڈ کی شکستہ حالت کے باعث نہ صرف آئے روز حادثات میں اضافہ ہوا بلکے لوگوں کو اس راستہ سے شہر میں داخل ہونے میں شدید دشواری کا سامنا تھا۔سٹیزنز فورم کا ایک تین رکنی وفد جس میں محمد نسیم،انجم بشیر احمد اور قلزم بشیر احمد شامل تھے نے شہریوں کی اس شکایت سے ممبر پنجاب اسمبلی حاجی نشاط احمد خان ڈاہا کو آگاہ کیا جنہوں نے ڈپٹی کمشنر آغا ظہیر عباس شیرازی سے اس اہم عوامی مسئلہ کو حل کرنے کو کہا ڈپٹی کمشنر نے اس عوامی مسئلہ کے حل میں بڑا فعال کردار ادا کرتے ہوئے اس سڑک کی تعمیر و مرمت شوگر سیس فنڈ سے کروانے کے احکامات جاری کیے عوامی سماجی تجارتی حلقوں اور شہریوں نے ڈپٹی کمشنرآغا ظہیر عباس شیرازی اور ممبر پنجاب اسمبلی حاجی نشاط احمد خان ڈاہا کی کاوش کو سراہا ہے جو دیرینہ عوامی مطالبہ پورا کرنے کے لیے کی ہے۔

نشاط ڈاہا

مزید :

ملتان صفحہ آخر -