ہائی کورٹ: جمشید دستی کیخلاف کیس  کی سماعت یکم اکتوبر تک ملتوی

   ہائی کورٹ: جمشید دستی کیخلاف کیس  کی سماعت یکم اکتوبر تک ملتوی

  

 ملتان (خصو صی رپورٹر) ہائیکورٹ ملتان بنچ کے ججز جسٹس طارق سلیم شیخ اور جسٹس انوار الحق پنوں پر مشتمل ڈویڑن بینچ (بقیہ نمبر19صفحہ 6پر)

نے سابق رکن قومی اسمبلی اور عوامی راج پارٹی کے سربراہ جمشید خان دستی کی حفاظتی ضمانت پر رہائی اور ریمانڈ کی کارروائی کو غیر قانونی قرار دینے کے خلاف پراسیکیوٹر کی جانب سے دائر کردہ انٹراکورٹ اپیل پر سماعت یکم اکتوبر تک ملتوی کردی ہے۔ فاضل عدالت نے قرار دیا کہ یہ اپیل قابل سماعت نہیں ہے۔ ہراسیکوٹرز سپریم کورٹ سے رجوع کریں۔ قبل ازیں چودھری طاہر محمود نے اپیل کو منظور کرنے کے حق میں دلائل دیے اور مہلت طلب کی جبکہ جمشید خان دستی کی جانب سے سینئر قانون دان میاں عباس احمد ، میاں خالد نعیم بھٹی اور باصر خان سکھانی نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ اپیل قابل اخراج ہے قابل سماعت نہیں جمشید خان دستی پر حکومت کے ایما پر تھانہ کرم داد قریشی نے آئل ٹینکر چوری کا مقدمہ بنایا انہیں گرفتار کر کے جسمانی ریمانڈ پر لیا گیا تھا جس پر عدالت عالیہ ملتان بنچ کے جج جسٹس چوہدری مشتاق احمد نے جمشید دستی کی حفاظتی ضمانت منظور کرتے ہوئے مقدمہ کی کارروائی کو کالعدم قرار دیا اور انہیں موقع پر رہا کرنے کا حکم دیا تھا اس موقع پر جمشید دستی کے وکیل میاں خالد نعیم بھٹی نے موقف اختیار کیا تھا کہ آئل ٹینکر چوری کا مقدمہ در اصل سیاسی انتقام کا حصہ ہے کیونکہ ان کے مؤکل نے آزادی مارچ کی حمایت اور حکومتی پالیسیوں کی مخالفت کی تھی۔

ملتوی

مزید :

ملتان صفحہ آخر -