رات کیا کیا مجھے ملال نہ تھا  | جرأت قلندر بخش |

رات کیا کیا مجھے ملال نہ تھا  | جرأت قلندر بخش |
رات کیا کیا مجھے ملال نہ تھا  | جرأت قلندر بخش |

  

رات کیا کیا مجھے ملال نہ تھا 

خواب کا تو کہیں خیال نہ تھا 

آج کیا جانے کیا ہوا ہم کو 

کل بھی ایسا تو جی نڈھال نہ تھا 

بولے سب دیکھ میری جاں کاوی 

یہ تو فرہاد کا بھی حال نہ تھا 

جب تلک ہم نہ چاہتے تھے تجھے 

تب تک ایسا ترا جمال نہ تھا 

اب تو دل لگ گیا ہے کیوں کہ نہ آئیں 

پہلے کہتے تو کچھ محال نہ تھا 

ٹل گیا دیکھ یوں ترا ابرو 

کہ گویا چرخ پر ہلال نہ تھا 

ٹک نہ ٹھہرا مرے وہ پاس آ کر 

کچھ تماشا تھا یہ وصال نہ تھا 

دیکھ شب اپنے رشک لیلیٰ کو 

دنگ تھا میں تو مجھ میں حال نہ تھا 

سن کے بولا تمام قصۂ قیس 

عشق کا اس کو بھی کمال نہ تھا 

اتنا رویا لہو تو کب جرأتؔ 

ابھی دامن ترا تو لال نہ تھا 

شاعر: جرأت قلندر بخش

(دیوانِ جرأت: سالِ اشاعت،1912)

Raat   Kaya   Kaya   Mujhay   Malaal   Na   Tha

Khaab   Ka   To   Kahen   khayaal   Na   Tha

Aaj   Kaya   Jaanay    Kaya   Hua   Ham   Ko

Kall   Bhi   Aisa   To   Ji   Nidhaal   Na   Tha

Bolay   Sab   Dekh   Meri     Jaan    Kaavi

Yeh    To   Farhaad   Ka    Bhi   Haal   Na   Tha

Jab   Talak   Ham   Na   Chaahtay   Thay   Tujhay

Tab   Tak   Aisa   Tira   Jamaal   Na   Tha

Ab  To   Dil    Lag   Gaya   Hay   kiun   Keh   Na   Aaen

Pehlay  Kehtay   To   Kuchh   Mahaal   Na    Tha

Tall   Gaya    Dekh   Yun   Tira    Abroo

Keh   Goya    Charkh   Par   Hilaal   Na   Tha

Tukk   Na   Thehra   Miray   Paas   Wo    Aa   Kar

Kuch   Tamaasha    Tha    Yeh   Visaal   Na   Tha

Dekh   Shab    Apnay    Rashk-e-  Laila   Ko

Dang   Tha    Main      To    Mujh    Men    Haal   Na   Tha

Sun   K   Bola   Tamaam    Qissa-e- Qais

Eshq   Ka    Iss   Ko   Bhi   Kamaal   Na   Tha

Itna   Roya    Lahu   To   Kab   JURAT

Abhi   Daaman   Tira   To   Laal   Na   Tha

Poet: Jurat   Qalandar   Bakhsh

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -