چھری میرے گلے پر پھیر دو کیا ہو نہیں سکتا | جلیل مانک پوری |

چھری میرے گلے پر پھیر دو کیا ہو نہیں سکتا | جلیل مانک پوری |
چھری میرے گلے پر پھیر دو کیا ہو نہیں سکتا | جلیل مانک پوری |

  

چھری میرے گلے پر پھیر دو کیا ہو نہیں سکتا

اب ایسے تم ہو  نازک تم سے اتنا ہو نہیں سکتا

لبِ جان بخش پہ مرتے ہوئے لاکھوں کو دیکھا ہے

مسیحا کہنے سے قاتل مسیحا ہو نہیں سکتا

نگاہوں سے تو   چھپتے ہیں مگر آنکھوں میں پھرتے ہیں

اِسی کا نام پردہ ہے تو پردہ ہو نہیں سکتا

وہی اب بے وفا کہلاتے ہیں جو ہم سے کہتے تھے

تم ایسے ہوں تو ممکن ہے میں ایسا ہو نہیں سکتا

کبھی دل لو کبھی پھیرو کبھی خوش ہو کبھی روٹھو

تمہیں تو کھیل ہے مجھ یہ جھگڑا ہو نہیں سکتا

قیامت میں بڑا مجمع سہی پہچان ہی لیں گے

انہیں ہ وجائے دھوکا ہمیں دھوکا ہو نہیں سکتا

جو حالت دیکھتے ہیں جاکے اس بیدرد سے کہہ دیں

ہمارے دوستوں سے ہائے اتنا ہو نہیں سکتا

جلیلِ خستہ جاں کو تم کہا ں تک آزماؤ  گے

تمہارا ہے تمہارا اب کسی کا ہو نہیں سکتا

شاعر: جلیل مانک پوری

(مجموعہ کلام"قصائد و قطعات تاریخ":مرتبہ: علی احمد جلیلی، سالِ اشاعت،1995)

Chhuri   Meray   Galay   Par   Phiar   Do   Kaya   Ho   Nahen   Sakta

Ab   Aisay   Tum   Ho   Nazuk   Tum   Say   Aisa   Ho   Nahen   Sakta

Ab   Jaan   Bakhsh   Pe   Martay   Huay   Laakhon  Ko    Dekha   Hay

Maseeha   Kehnay   Say   Qaatil   Maseeha   Ho   Nahen   Sakta

Nigaahon   Say   To   Chhuptay   Hen   Magar   Aankhon  Men   Phirtay   Hen

ٰIsi   Ka   Naam   Parda   Hay   To   Parda   Ho   Nahen   Sakta

Wahi   Ab   BeWafa    Kehlaaty   Hen   Jo   Ham   Say   Kehtay   Thay

Tum   Aisay   Hon   To   Mumkin   Hay   Main   Aisa   Ho   Nahen   Sakta

Kabhi   Dil   Lo   Kabhi   Phairo   Kabhi   Khush   Kabhi   Rootho

Tumhen   To   Khail   Hay   Mujh   Say    Yeh    Jhagrra   Ho   Nahen   Sakta

Qayaamat   Men   Barra   Majma   Sahi   Pehchaan   Hi   Len    Gay

Unhen   Ho   Jaaey   Dhoka   Hamen   Dhoka    Ho   Nahen   Sakta

Jo   Haalat   Dekhtay   Hen   Jaa   K   Uss   Bedard    Say   Keh   Den

Hamaaray   Doston   Say   Haaey   Itna    Ho   Nahen   Sakta

JALEEL -e- Khsta   Jaan   Ko   Tum   Kahan   Tak   Aazmaao   Gay

Tumhaara   Hay   Tumhaara   Ab   Kisi   Ka    Ho   Nahen   Sakta

Poet: Jaleel   ManikPuri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -