ریلوے کو تو سب کچھ کلیئر کرکے یہاں آ جانا چاہئے تھا، ٹریکٹر لے کر جائیں اور سب تجاوزات گرادیں، چیف جسٹس آف پاکستان کے سرکلر ریلوے کراچی کی بحالی سے متعلق کیس میں ریمارکس

ریلوے کو تو سب کچھ کلیئر کرکے یہاں آ جانا چاہئے تھا، ٹریکٹر لے کر جائیں اور سب ...
ریلوے کو تو سب کچھ کلیئر کرکے یہاں آ جانا چاہئے تھا، ٹریکٹر لے کر جائیں اور سب تجاوزات گرادیں، چیف جسٹس آف پاکستان کے سرکلر ریلوے کراچی کی بحالی سے متعلق کیس میں ریمارکس

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)سرکلر ریلوے کراچی کی بحالی سے متعلق کیس میں چیف جسٹس گلزاراحمد نے ریمارکس دیتے ہوئے کہاکہ ریلوے کو تو سب کچھ کلیئر کرکے یہاں آ جانا چاہئے تھا،ٹریکٹر لے کر جائیں اور سب تجاوزات گرادیں۔

سپریم کورٹ میں سرکلر ریلوے کراچی کی بحالی سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی ، وکیل نے کہاکہ ریلوے کی جانب سے رپورٹ جمع کرا دی گئی ، چیف جسٹس گلزاراحمد نے کہاکہ تصاویر لگائی ہیں ان سے کچھ پتہ نہیں چلتا، تصویروں میں توساری زمین پر قبضہ نظر آتاہے،چیف جسٹس نے استفسار کیاکہ ٹریک کے ساتھ زمین پر قبضہ ہے، ٹرین کیسے چلے گی؟، سی ای او ریلوے نے کہاکہ ٹرین کے چلنے کیلئے راستہ کلیئر ہے، چیف جسٹس گلزاراحمد نے کہاکہ ذمہ دار افسر کی طرح بات کریں ، جن زمینوںپر قبضہ ہے کہا ریلوے کی زمین نہیں ؟، ریلوے کو تو سب کچھ کلیئر کرکے یہاں آ جانا چاہئے تھا،ٹریکٹر لے کر جائی اور سب تجاوزات گرادیں۔

جسٹس فیصل عرب نے کہاکہ ایک بلڈگ کا تو ٹریک سے 4 فٹ کا بھی فاصلہ نہیں ، ریلوے ٹریک کے ساتھ زمین کلیئر کرائیں ، سماعت میں وقفہ کردیاگیا

مزید :

قومی -علاقائی -اسلام آباد -