توبہ جب توڑیے پیدا یہ صدا ہوتی ہے | جلیل مانک پوری |

توبہ جب توڑیے پیدا یہ صدا ہوتی ہے | جلیل مانک پوری |
توبہ جب توڑیے پیدا یہ صدا ہوتی ہے | جلیل مانک پوری |

  

توبہ جب توڑیے پیدا یہ صدا ہوتی ہے

ہائے کیا چیز مئے ہوش رُبا ہوتی ہے

یوں تو اس کی ہر ادا ہوش رُبا ہوتی ہے

جو ذرا شوخ نکلتی ہے قضا ہوتی ہے

روئے معشوق سے ہے اس کا اُٹھانا دشوار

لاکھ پردوں کا جو اک پردہ حیا ہوتی ہے

رنگ چہرے کا اُڑا خواب اُڑا آنکھوں سے

کوچۂ عشق میں کیا تیز ہوا ہوتی ہے

باغ میں شوخیِ رفتار کا موقع کیا ہے

دیکھیے دیکھیے پامال حنا ہوتی ہے

پینے والوں سے نہیں ہوش سنبھالا جاتا

مفت بدنام سے ہوش رُبا ہوتی ہے

خاک میں چرخ ملاتا ہے ملانے دوجلیل

اور بھی آئینۂ دل کی جلا ہوتی ہے

شاعر: جلیل مانک پوری

(مجموعہ کلام"قصائد و قطعات تاریخ":مرتبہ: علی احمد جلیلی، سالِ اشاعت،1995)

Taoba    Jab   Torriay   Paida  Yeh   Sadaa    Hoti   Hay

Haaey   Kaya   Cheez    May-e- Hosh   Rubaa   Hoti   Hay

Yun   To   Uss   Ki    Har   Adaa   Hosh   Rubaa   Hoti   Hay

Jo   Zara   Shokh   Nikalti   Hay    Qazaa    Hoti   Hay

Roo-e-Mashooq   Say   Hay   Uss   Ka   Uthaana   Dushwaar

Laaklh   Pardon   Ka   Jo    Ik   Parda   Hayaa   Hoti   Hay

Rang   Chehray   Ka   Urra   Khaab   Urra   Aankhon   Say

Koocha-e- Eshq   Men   Kaya   Taiz   Hawaa   Hoti   Hay

Baagh   Men   Shokhi-e- Raftaar   Ka    Maoqa   Kaya   Hay

Daikhiay   Daikhiay   Pamaal   Hina   Hoti   Hay

Peenay   Waalon   Say   Nahen   Hosh    Sanbhaala   Jaata

Muft   Badnaam   May-e- Hosh    Rubaa   Hoti   Hay

Poet: Jaleel   Manikpuri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -