جہاں بدلنے کا وہ بھی گمان رکھتے ہیں | جمال احسانی |

جہاں بدلنے کا وہ بھی گمان رکھتے ہیں | جمال احسانی |
جہاں بدلنے کا وہ بھی گمان رکھتے ہیں | جمال احسانی |

  

جہاں بدلنے کا وہ بھی  گمان رکھتے ہیں

جو گھر کے نقشے میں پہلے دکان رکھتے ہیں

خدا کے نام کی تکریم کے علمبردار

خدا کے گھر سے اونچے مکان رکھتے ہیں

ہم اپنے جسم میں رکھتے ہیں اک زمیں کی مہک

ہم اپنی روح میں اک آسمان رکھتے ہیں

مرے خدا نے وہ دشمن مجھے نصیب کیے

جو اپنے تیر سے چھوٹی کمان رکھتے ہیں

کسی کی نیم نگاہی سے جلنے لگتا ہے

وہ جس چراغ میں ہم اپنی جان رکھتے ہیں

عبث ہے ان سے توقع کوئی زمانے میں

جو لوگ نشے میں بھی اپنا دھیان رکھتے ہیں

ہر انجمن میں الگ سے دکھائی دیتے ہیں

کوئی فضا ہو ہم اپنی اُڑان رکھتے ہیں

شاعر: جمال احسانی

(مجموعہ کلام"تارےکو مہتاب کیا )

Jahan    Badalnay   Ka   Wo   Bhi    Gumaan    Rakhtay    Hen

Jo   Ghar   K   Naqshay   Men    Pehlay    Dokaan   Rakhtay    Hen

KHUDA   K   Naam   Ki    Takreem   K    Alambardaar

KHUDA   K   Ghar   Say   Ooncha    Makaan   Rakhtay    Hen

Ham   Apnay   Jism    Me    Rakhtay   Hen    Ik    Zameen   Ki   Mahak

Ham   Apni   Rooh   Men   Ik   Aaasmaan   Rakhtay    Hen

Miray    KHUDA   Nay   Wo   Dushman   Mujhay   Naseeb   Kiay

Jo   Apnay   Teer   Say   Chhoti   Kamaan   Rakhtay    Hen

Kiss   Ki   Neem   Nigaahi   Say   Jalnay   Lagta   Hay

Wo   Jiss   Charaagh   Men   Ham   Apni    Jaan   Rakhtay    Hen

Abass    Hay   Un   Say   Tawaqqo   Koi    Zamanay   Men

Jo    Log   Nashay   Men   Bhi   Apna    Dhayaan   Rakhtay    Hen

Har    Anjuman    Men    Alag    Say    Gikhaai   Detay   Hen

Koi    Fazaa    Ho    Ham    Apni    Urraan    Rakhtay    Hen

Poet: Jamal   Ehsani

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -