زمانے کو اوجِ نظربخشتا ہوں| جوش ملیح آبادی |

زمانے کو اوجِ نظربخشتا ہوں| جوش ملیح آبادی |
زمانے کو اوجِ نظربخشتا ہوں| جوش ملیح آبادی |

  

شاعر کی بخششیں

زمانے کو اوجِ نظربخشتا ہوں

جو جھکتا نہیں ہے وہ سر بخشتا ہوں

ادب کر مرا کشورِ ہند، ادب کر

کہ لاکھوں دِلوں کو نظر بخشتا ہوں

مری قدر کر اے خدائے تجلی

کہ شامِ وطن کو سحر بخشتا ہوں

گدا ہوںم مگر وہ گدائے غنیِ دل

کہ تاج و کلاہ و کمر بخشتا ہوں

دلِ خس کو دیتا ہوں بجلی کی شوخی

صدف کو مزاجِ گہر بخشتا ہوں

کہاں تک یہ فریا د اے مرغِ بسمل

ادھر آ میں بال و پر بخشتا ہوں

جسے بخشتا ہوں حیات و جوانی

بہ اندازۂ بحر و بر بخشتا ہوں

شاعر: جوش ملیح آبادی

(مجموعہ کلام: حرف و حکایت؛سال اشاعت،1943 )

Shaair Ki Bakhishen

Zamaanay   Ko   Aoj-e- Nazar   Bakhshita    Hun

Jo   Jhukta   Nahen   Wo   Sar   Bakhshita    Hun

Adab   Kar   Mira   Kishwar-e-Hind  ,   Adab   Kar

Keh   Laakhon   Dilon   Ko   Nazar   Bakhshita    Hun

Miri   Qadr   Kar   Ay   KHUDA -e- Tajalli

Keh   Shaam-e-Watan   Ko   Sahar   Bakhshita    Hun

Gadaa   Hun   Magar  Wo  Gadaa-e- Ghani-e-Dil

Keh Taaj -o-Kulaah-o- Kamar   Bakhshita    Hun

Dil-e- Khass    Ko   Bakhshita    Hun   Bijli   Ki   Shokhi

Sadaf   Ko     Mizaaj-e -Gohar   Bakhshita    Hun

Kahan   Tak   Yeh   Faryaad   Murgh-e-Bismil

Idhar   Aa   Main   Baal-o-Par   Bakhshita    Hun

Jisay   Bakhshita    Hun   Hayaat -o- Jawaani

Ba  Andaaza-e- Bar-o- Bar   Bakhshita    Hun

Poet: Josh   Malihabadi

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -