اشارۂ مشیت | جوش ملیح آبادی |

اشارۂ مشیت | جوش ملیح آبادی |
اشارۂ مشیت | جوش ملیح آبادی |

  

اشارۂ مشیت

خد اگواہ کہ منشا ہے یہ مشیت کا

کہ ہر نظام کے ہمراہ ابتری بھی رہے

موحدوں کو رہے اختیارِ  بت شکنی

برہمنوں کے لیے اذنِ آذری بھی رہے

طلسمِ کوثر و تسنیم بھی نہ ہو   باطل

شرابِ ناب کی موجِ فسوں گری بھی رہے

حدیثِ طاعت و آیاتِ حق کے دوش بدوش

زمیں پہ کفر و بغاوت کی شاعری بھی رہے

فسوں طرازیِ ولیل کے تقابل کو

کرشمہ سازیِ گیسوئے دلبری بھی رہے

شعارِعجز و سرِانکسار کے ہمراہ 

سرشتِ حضرتِ انساں میں خود سری بھی رہے

مذاقِ بندگی و  ذوقِ سجدہ کے باوصف

مزاجِ آدمِ خاکی میں داوری بھی رہے

غرضکہ حکمِ مشیت یہ ہے کہ دنیا میں 

پیمبری بھی رہے اور کافری بھی رہے

شاعر: جوش ملیح آبادی

(مجموعہ کلام: حرف و حکایت؛سال اشاعت،1943 )

Ishaara-e- Mashhiyat

KHUDA   Gawaah   Keh   Mansha   Hay  Mashhiyat   Ka

Keh    Har   Nizaam   K   Hamraah   Abtari   Bhi   Rahay

Muahhadon   Ko    Rahay  Ikhtiyaar -e- But   Shikani

Barehmanon   K   Liay   Izn-e- Aazri   Bhi   Rahay

Talism-e- Kosar -o- Tasneem   Bhi    Na   Ho   Baatil

Sharaab-e- Naab   Ki   Maoj-e- Fusoon   Gari   Bhi   Rahay

Hadees -e- Taat-o- Ayaat -e- Haq   K   Dosh   Ba  Dosh

Zameen    Pe   Kufr-o- Baghaawat   Ki   Shayari    Bhi   Rahay

Fusoon  Taraazi-e-Wallail   K   Taqaabul   Ko

Karishma   Saazi-e- Gaisu-e- Dilbari   Bhi   Rahay

Shaar-e-Ijz-o- Sar-e-Inkasaar   K   Hamraah

Sarisht-e-Hazrat-e-Insaan   Men   Khud   Sari    Bhi   Rahay

Mazaaq-e-Bandagi -o-Zaoq -e-Sajda   K   Ba  Wasf

Mizaj-e-Aadam-e-Khaaki   Men   Daawari    Bhi   Rahay

Gharaz    Keh   Hukm-e-Mashiyat   Yeh   Hay   Keh   Dunya   Men 

Payambari   Bhi   Rahay   Aor   Kaafri   Bhi   Rahay

PoetL: Josh   Malihabadi

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -