شکر کیا ہو غمِ نہانی کا | جگر بریلوی |

شکر کیا ہو غمِ نہانی کا | جگر بریلوی |
شکر کیا ہو غمِ نہانی کا | جگر بریلوی |

  

شکر کیا ہو غمِ نہانی کا

جم گیا رنگ زندگانی کا

ولولہ عالمِ جوانی کا

معجزہ حیاتِ فانی کا

وہ سمایا ہوا ہے رگ رگ میں

فیض ہے یہ غمِ نہانی کا

قطرۂ اشک خلاصہ ہے

میری دنیائے کامرانی کا

جیتے ہی عمر ہو گئی لیکن

نہ کھلا راز زندگانی کا

شاعر: جگر بریلوی

(مجموعہ کلام: انتخابِ جگر بریلوی؛سال اشاعت،1960 )

Shukr   Kaya   Ho    Gham-e-Nihaani   Ka

Jam   Gaya   Rang   Zindgaani   Ka

Walwalaa   Aalam-e-Jawaani   Ka

Mujazaa   Hay    Hayaat-e-Faani   Ka

Wo   Samaaya   Hua   Hay   Rag   Rag   Men

Faiz   Hay   Yeh   Gham-e- Nihaan    Ka

Qatra-e-Ashk    Ik   Khuaalsa   Hay

Meri   Dunya-e-Kaamraani   Ka

Jeetay   Hi   Umr   Ho   Gai   Lekin

Na   Khula   Raaz    Zindgaani Ka

Poet: Jigar    Barelvi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -