یادش بخیر جب وہ تصور میں آ گیا  | جگر مراد آبادی |

یادش بخیر جب وہ تصور میں آ گیا  | جگر مراد آبادی |
یادش بخیر جب وہ تصور میں آ گیا  | جگر مراد آبادی |

  

یادش بخیر جب وہ تصور میں آ گیا 

شعر و شباب و حسن کا دریا بہا گیا

جب عشق اپنے مرکز اصلی پہ آ گیا 

خود بن گیا حسین دو عالم پہ چھا گیا 

جو دل کا راز تھا اسے کچھ دل ہی پا گیا 

وہ کر سکے بیاں نہ ہمیں سے کہا گیا 

ناصح فسانہ اپنا ہنسی میں اڑا گیا 

خوش فکر تھا کہ صاف یہ پہلو بچا گیا 

اپنا زمانہ آپ بناتے ہیں اہلِ دل 

ہم وہ نہیں کہ جن کو زمانہ بنا گیا 

دل بن گیا نگاہ نگہ بن گئی زباں 

آج اک سکوتِ شوق قیامت ہی ڈھا گیا 

میرا کمال شعر بس اتنا ہے اے جگرؔ 

وہ مجھ پہ چھا گئے میں زمانے پہ چھا گیا 

شاعر: جگر مراد آبادی

(مجموعہ کلام: آتشِ گل؛سال اشاعت،1972)

Yaadash    Bakhir    Jab   Wo    Tasawwar     Men   Aa   Gaya

Sher -o-Shabaab-o-Husn   Ka    Darya   Bahaa    Gaya

Jab   Eshq   Apnay   Markaz-e-Asli    Pe   Aa   Gaya

Khud   Ban   Gaya   Haseen  ,   Do   Aalam   Pe   Chaa   Gaya

Jo   Dil   Ka   Raaz   Tha   Usay   Kuchh   Dil   Hi   Paa   Gaya

Wo  Kar   Sakay   Bayaan , Na   Hameen   Say     Kaha   Gaya

Naaseh    Fasaad   Apna   Hansi   Men   Urraa   Gaya

Khush   Fikr   Tha   Keh   Saaf    Yeh     Pehloo   Bachaa   Gaya

Apan   Zamaana   Aap    Banaatay   Hen   Ehl-e-Dil

Ham   Wo    Nahen   Keh    Jin    Ko    Zamaana    Bana   Gaya

Dil    Ban    Gaya    Nigaah  ,  Nigah    Ban    Gai    Zubaan

Aaj    Ik   Sakoot-e-Shaoq   Qayaamat   Hi   Dhaa   Gaya

Mera    Kamaal -e-Sher   Bass   Itna   Hay   Ay   JIGAR

Wo    Mujh    Pe   Chha    Gaey    Main    Zamaanay    Pe   Chaa   Gaya 

Poet: Jigar    Moradabadi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -