کوئی جیتا ، کوئی مرتا ہی رہا | جگر مراد آبادی |

کوئی جیتا ، کوئی مرتا ہی رہا | جگر مراد آبادی |
کوئی جیتا ، کوئی مرتا ہی رہا | جگر مراد آبادی |

  

کوئی جیتا ، کوئی مرتا ہی رہا

عِشق اپنا کام کرتا ہی رہا

جمع خاطر کوئی کرتا ہی رہا

دِل کا شیرازہ بِکھرتا ہی رہا

غم وہ میخانہ، کمی جس میں نہیں

دِل وہ پیمانہ، کہ بھرتا ہی رہا

حسن تو تھک بھی گیا ، لیکن یہ عِشق

کارِ معشوقانہ کرتا ہی رہا

وہ مِٹاتے ہی رہے، لیکن یہ دِل

نقش بن بن کر اُبھرتا ہی رہا

دھڑکنیں دِل کی، سبھی کُچھ کہہ گئیں

دِل کو میں خاموش کرتا ہی رہا

تم نے نظریں پھیر لیں تو کیا ہوا

دِل میں اِک نشتر اُترتا ہی رہا

شاعر: جگر مراد آبادی

(مجموعہ کلام: آتشِ گل؛سال اشاعت،1972)

Koi    Jeeta   ,   Koi     Marta    Hi   Raha

Eshq   Apna   Kaam    Karta    Hi   Raha

Jamaa    Khaatir    Koi    Karta    Hi     Raha

Dil    Ka    Sheraaza     Bikharta    Hi   Raha

Gham    Wo     Maikhaana   ,   Kami    Jiss    Men    Nahen

Dil    Wo     Paimaana    Keh    Bharta    Hi   Raha

Husn   To    Thak    Bhi    Gaya    Lekin    Yeh    Eshq

Kaar-e-Mashookaana    Karta    Hi     Raha

Wo    Mittaatay    Hi    Rahay    Lekin    Yeh    Dil

Naqsh    Ban    Ban   Kar    Ubharta    Hi     Raha

Dharrkanen    Dil    Ki    Sabhi    Kuch    Keh   Gaen

Dil   Ko    Main     Khamosh    Main    Karta    Hi   Raha

Tum     Nay    Nazren    Phair    Len   To    Kaya   Hua

Dil    Men    Ik    Nishtar   Utara   Hi   Raha

Poet: Jigar   Moradabadi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -