جارحانہ کھیل کا مطلب یہ نہیں کہ سب شاہد آفریدی بن جائیں: شعیب اختر

جارحانہ کھیل کا مطلب یہ نہیں کہ سب شاہد آفریدی بن جائیں: شعیب اختر
جارحانہ کھیل کا مطلب یہ نہیں کہ سب شاہد آفریدی بن جائیں: شعیب اختر

  

راولپنڈی(ڈیلی پاکستان آن لائن )قومی کرکٹ ٹیم کے سابق فاسٹ باولر شعیب اختر نے کہا ہے کہ رمیز راجہ نے کھلاڑیوں سے جارحانہ کھیلنا کا کہا ہے مگر اس کا مطلب یہ نہیں کہ سب شاہد آفریدی بن جائیں۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ہم نے 6 ماہ بعد رمیز راجہ کو جج کرنا ہے کہ انہوں نے کیا کیا؟انہوں نے کہا کہ فخر زمان، دھانی اورشعیب ملک اگر ٹیم میں آتے ہیں تو ورلڈ کپ ہمارا ہو گا۔ ورلڈ کپ میں اگر شاہ نواز دھانی اور وہاب نہ ہوئے تو ان کی کمی محسوس کریں گے۔

نجی نیوز چینل کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ بھارت پیسے کے بل بوتے پر حکمرانی کررہا ہے، ہمیں ریونیو بڑھانے کی ضرورت ہے، ہم نے دیہاڑی نہیں چلانی ،ہم نے پالیسی میکنگ پر جانا ہے۔سابق ٹیسٹ کرکٹر نے کہا کہ جب پی سی بی 15 بلین سے 115 بلین پر چلا جائے گا تو ہمیں کسی کی ضرورت نہیں رہے گی، پیسہ نہ ہونے کی وجہ سے کوئی ہمیں پوچھتا نہیں ہے۔ان کا کہنا تھا کہ جب تک پی سی بی ریونیو بڑھانے پر نہیں جاتا کچھ ٹھیک نہیں ہو گا، پیسے بن سکتے ہیں لیکن یہاں پر کام کرنا پڑے گا۔

مزید :

کھیل -