ہائے! انسانیت مر گئی۔۔۔ ایک اور لڑکی 

 ہائے! انسانیت مر گئی۔۔۔ ایک اور لڑکی 
 ہائے! انسانیت مر گئی۔۔۔ ایک اور لڑکی 

  

تحریر۔۔۔ سعدیہ مغل

کیا بیان کروں، کیسی تعبیر دوں، کاہے کے بول، کہاں کی تعزیت اور کیا نوحہ گری۔۔۔۔۔ظلم، ظلم اور بس ظلم۔۔۔۔۔۔۔پدر سری معاشرے کا ایک اور شاخسانہ، ٹبر پرستی و قبیلہ پرستی کا ایک اور کارنامہ، حیا سے عاری خودساختہ غیرت مندوں کی ایک اور کارروائی۔۔۔۔۔۔۔۔۔بنت حوا پھندے سے جھول گئی، اناپرستی جیت گئی، قبیلے کا سینہ چوڑا ہوا اور انسانیت ہار گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تف ہے ایسی سوچ پر، افسوس ہے ایسے عمل پر، لعنت ہے ایسے کردار پر۔۔۔۔۔۔۔نہ چار دیواری کا خیال، نہ عصمت کی کوئی لاج اور نہ ہی عزتوں کی کوئی پرواہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جرم کوئی کرے سزا کوئی بھگتے۔۔۔میرے مولا حشر پھر بھرپا کیوں نہ ہوا۔۔۔۔۔۔۔۔مولا! کر دے کوئی حشر بھرپا کہ تیرے بندے بھیڑیے بن چکے، ظلم کی تمام حدود پھلانگ چکے اور انسانیت کو شرما چکے۔۔۔۔۔۔

خدارا! آئندہ کوئی بھاشن نہ دے کہ "حویلی" میں بڑے پڑھے لکھے لوگ رہتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ کیسی تعلیم ہے کہ ان لوگوں کو یہ تک خبر نہیں کہ انسانوں کی مختلف قبیلوں میں تقسیم خدائی دین ہے، یہ کوئی کسبی تھوڑی ہے اور ہاں! یہ خدائی عدالت سے کوئی مانگ کے تھوڑا ہی لایا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن نہیں یہاں تو کوئی راٹھور ہے، کوئی چوہدری ہے، کوئی راجہ ہے اور کوئی سدھن ہے۔۔۔۔۔۔۔بس قلق یہ ہے کہ کوئی مسلمان نہیں ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آو! آگے بڑھیں اور انسانیت کی خاطر یکجا ہو جائیں۔۔۔۔۔ایسے لوگوں کا سماجی ناطقہ کریں۔۔۔۔ظلم کے آگے بند باندھیں۔۔۔۔۔۔۔کہیں ایسا نہ ہو کہ یہ ظلم کل ہماری چوکھٹ پھلانگے اور سہارا دینے والا کوئی نہ ہو۔۔۔۔۔

محمد احسان۔۔

 نوٹ:یہ بلاگر کا ذاتی نقطہ نظر ہے جس سے ادارے کا متفق ہونا ضروری نہیں۔

۔

 اگرآپ بھی ڈیلی پاکستان کیساتھ بلاگ لکھنا چاہتے ہیں تو اپنی تحاریر ای میل ایڈریس ’zubair@dailypakistan.com.pk‘ یا واٹس ایپ "03009194327" پر بھیج دیں.   ‎

مزید :

بلاگ -