پنجاب حکومت کا اسلام آباد میں پولیس نہ بھجوانے کا فیصلہ: سندھ حکومت نے دستہ بھیج دیا 

پنجاب حکومت کا اسلام آباد میں پولیس نہ بھجوانے کا فیصلہ: سندھ حکومت نے دستہ ...

  

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) پنجاب حکومت نے وزارت داخلہ کی درخواست پر جواب دیتے ہوئے اسلام آباد میں پولیس نفری نہ بھجوانے کا فیصلہ کیا ہے۔آئی جی اور وزیرداخلہ پنجاب کی جانب سے وفاقی وزارت داخلہ کے مراسلے کا جواب دیتے ہوئے کہا گیا ہے کہ نفری نہ بجھوانے کا فیصلہ باہمی مشاورت سے کیا گیا ہے، بوقت ضرورت سیکیورٹی کے پیش نظر راولپنڈی پولیس کو ذمہ داریاں سونپی جائیں گی۔دوسری طرف وفاقی دارلحکومت میں پی ٹی آئی کے ممکنہ احتجاج کے پیش نظر سندھ پولیس کو اسلام آباد پولیس کی مدد کیلئے بھیج دیا گیا۔تفصیلات کے مطابق اسلام آباد میں پی ٹی آئی کی جانب سے ممکنہ احتجاج کے پیش نظر وزارت داخلہ کی درخواست پر سندھ پولیس کا دستہ اسلام آباد بھیج دیا گیا۔وزارت داخلہ نے سندھ پولیس کو اسلام آباد امن و امان کی صورتحال کنٹرول میں رکھنے اور پولیس کی مدد کیلئے طلب کیا گیا ہے، سندھ پولیس اسلام آباد پولیس کی مکمل معاونت کرے گی۔پرنسپل پی ٹی سی شہداد پور علی شیر جاکھرانی سندھ پولیس کی کمانڈ کریں گے، ایک ایس پی،4ڈی ایس پی،ڈی آئی جی اسٹیبلشمنٹ کی جانب سے فراہم کئے جائیں گے۔پی ٹی سی شہداد پور سے 900 ٹرینی اور 125ٹریننگ سٹاف اسلام آباد بھیجا گیا ہے، مجموعی طور پر 1ہزار 25اہلکار شہداد پور سے اسلام آباد پہنچیں گے۔ڈی آئی جی شہید بے نظیر آباد، لاڑکانہاور سکھر رینج اہلکاروں کی نقل و حرکت کے دوران مکمل سیکیورٹی فراہم کریں گے۔سندھ سے نکلنے تک مذکورہ ڈی آئی جیز کی سیکورٹی ہوگی اور تمام اہلکار سادہ لباس میں یونیفارم کے ہمراہ سفر کریں گے۔سندھ پولیس افرادی قوت کے علاوہ انسداد فسادات کے تمام آلات سے لیس ہوگی، ہر اہلکار کے پاس ہیلمٹ،شیلڈ اور ڈنڈا موجود ہوگا۔اہلکاروں کے پاس اینٹی رائٹس کٹ کے علاوہ شیل گن بھی ہوگی جبکہ مخصوص اہلکاروں کے پاس ایس ایم جی اور جی تھری رائفل بھی ہوں گی۔اے آئی جی لاجسٹک2ہزار لانگ رینج گیس شیل کی دستیابی یقینی بنائیں، 100گیس گن،1ہزاراینٹی رائٹ کٹ جس میں تمام آلات موجود ہوں کی دستیابی بھی لازمی ہوگی۔سندھ پولیس کو حکمنامہ پر عمل درآمد کیلئے سختی سے ہدایت نامہ جاری کردیا گیا ہے۔

وفاق درخواست

مزید :

صفحہ آخر -