سیورج ٹریٹمنٹ پلانٹ کی تکمیل سے ماحولیاتی فوائدملیں گے‘ فرید اللہ

  سیورج ٹریٹمنٹ پلانٹ کی تکمیل سے ماحولیاتی فوائدملیں گے‘ فرید اللہ

  

مردان(بیورو رپورٹ) ایشین ڈویلپمنٹ بینک کے تعاون سے خیبر پختونخوا سیٹیز امپرؤمنٹ پراجیکٹ کے تحت مردان کے چھ یونین کونسلوں کے نکاسی آب کی صفائی (سیورج ٹریمنٹ پلانٹ) کی بحالی کے سلسلے میں ایک عوامی سماعت کا اہتمام کیا گیا جس میں ادارہ تحفظ ماحولیات خیبر پختونخوا کے ڈپٹی ڈائریکٹر فرید اللہ شاہ،خیبر پختونخوا سیٹیز امپرومنٹ پراجیکٹ کے پراجیکٹ مینجمنٹ یونٹ کے  ڈائریکٹر امیر عالم خان،ڈبلیو ایس ایس سی ایم کے جنرل منیجر انجنیئر محمد خلیل اکبر، منیجر پلاننگ اینڈ پراجیکٹس عمران زمان،ادارہ تحفظ ماحولیات کے اسسٹنٹ ڈائریکٹرز محمد اسرار اور ریاض خان، ایڈیشنل اسسٹنٹ کمشنر جنید خالد اوراہلیان علاقہ نے کثیر تعدادمیں شرکت کی۔عوامی سماعت کا مقصد روڑیا سیورج ٹریٹمنٹ پلانٹ کی بحالی کے منصوبے کے حوالے سے بریفنگ دینا اور عوامی تحفظات کی شنوائی تھی۔تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ادارہ تحفظ ماحولیات کے ڈپٹی ڈائریکٹر فرید اللہ شاہ نے پراجیکٹ کی افادیت اور اس سے متعلق ماحولیاتی عوامل پر تفصیلی روشنی ڈالی اور کہاکہ اس پراجیکٹ کی بروقت تکمیل سے مردان کے چھ یونین کونسلوں کے رہائشیوں کو ایک اچھی تبدیلی اور ماحولیاتی فوائد میسر ہونگے۔تقریب سے خطاب کرتے ہوئے خیبر پختونخوا سیٹیز امپرومنٹ پی ایم یوکے ڈائریکٹرامیر عالم خان نے کہاکہ حکومت شہریوں کے معیار زندگی کو بہتر بنانے کے لئے کوشاں ہیں۔اس پراجیکٹ کے تحت گھروں اور دکانوں سے نکلنے والے نکاسی کے پانی کو قابل استعمال بنایا جائے گا۔ڈبلیو ایس ایس سی ایم کے منیجر پلاننگ اینڈ پراجیکٹس عمران زمان نے پراجیکٹ کے اغراض و مقاصد اوراس کی تکمیل سے مردان کے چھ شہری یونین کونسلوں روڑیا،مسلم آباد،گلی باغ،باڑی چم، ہوتی او ر بکٹ گنج کے دیرینہ مسائل کا خاتمہ ممکن ہو سکے گا اور نکاسی آب کی صفائی ممکن بنا کر دوبارہ قابل استعمال بنایا جاسکے گا۔پراجیکٹ کے کنسلٹنٹ ڈاکٹر عبد القیوم نے پراجیکٹ کے ڈیزائن،انفراسٹرکچر اور دیگر پہلوؤں پر تفصیلی روشنی ڈالی۔تقریب سے منتخب عوامی نمائندوں نے پراجیکٹ کی افادیت اور اسکی کامیابی کے لئے اپنے بھرپور تعاون کا اظہار کیا اور امید ظاہر کی کہ اس پراجیکٹ کی تکیل سے مجوزہ یونین کونسلوں کے رہائشیوں کی طرز زندگی پر مثبت آثرات مرتب ہونگے اور نکاسی آب کی روانی مزید بہتر ہو جائے گی۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -