عمران خان کے امریکہ مخالف بیانات سے دوطرفہ تعلقات کو نقصان پہنچا، وزیر اعظم شہباز شریف کا بیان

عمران خان کے امریکہ مخالف بیانات سے دوطرفہ تعلقات کو نقصان پہنچا، وزیر اعظم ...
عمران خان کے امریکہ مخالف بیانات سے دوطرفہ تعلقات کو نقصان پہنچا، وزیر اعظم شہباز شریف کا بیان

  

نیو یارک(ڈیلی پاکستان آن لائن)وزیراعظم شہباز شریف نے کہا ہے کہ عمران خان کے امریکہ مخالف بیانات سے دوطرفہ تعلقات کو نقصان پہنچا،عمران خان کی سوچ عام پاکستانی کی سوچ نہیں ہے۔پاکستان کے امریکہ کے ساتھ تعلقات اتار چڑھاؤ کا شکار رہے ہیں۔

امریکی خبر رساں ایجنسی ایسوسی ایٹڈ پریس (اے پی) کو انٹرویو دیتے ہوئےوزیراعظم شہباز شریف کا کہنا تھا کہ پچھلی حکومت نے جو کچھ کیا وہ پاکستان کے مفادات کے لیے نقصان دہ تھا۔ ہماری حکومت امریکہ کے ساتھ مضبوط تعلقات کی خواہاں ہے۔

سیلاب اور موسمیاتی تبدیلی پر بات کرتے ہوئے شہباز شریف کا کہنا تھا کہ سیلاب سے پاکستان کا ایک تہائی حصہ متاثر ہوا، سیلاب سے 40 لاکھ ایکڑ سے زائد رقبے پر کھڑی فصلیں تباہ ہوئیں۔ابتدائی تخمینے کے مطابق پاکستان کو سیلاب سے 30 ارب ڈالرز کا نقصان ہوا۔  بچوں سمیت 1600 افراد جاں بحق ہوئے، ہزاروں کلومیٹر سمیت انفراسٹرکچر شدید متاثر ہوا، پاکستان میں سیلاب سے 3 کروڑ 30 لاکھ افراد براہ راست متاثر ہوئے۔انہوں نے زور دیا کہ پاکستان کو سیلاب متاثرین کے ذریعۂ معاش کے لیے فنڈز کی ضرورت ہے۔وزیراعظم کا کہنا تھا کہ پاکستان کا گلوبل وارمنگ میں حصہ 1 فیصد سے بھی کم ہے، پاکستان کو دوسرے ممالک کی وجہ سے موسمیاتی تبدیلیوں کا سامنا ہے۔

بھارت سے متعلق بات کرتے ہوئے شہباز شریف کا کہنا تھا کہ بھارت پڑوسی ملک ہے اور پاکستان پُرامن پڑوسی ملک کے طور پر رہنا چاہتا ہے۔ دنیا پر واضح کیا پاکستان بھارت کے ساتھ پُرامن تعلقات کا خواہاں ہے تاہم بھارت کو 2019 کے بعد کے اقدامات کو تبدیل کرنا ہوگا۔افغانستان سے متعلق بات کرتے ہوئے شہباز شریف کا کہنا تھا کہ طالبان کو خواتین کے حقوق کی پاسداری یقینی بنانی ہوگی، خواتین کو تعلیم اور ملازمت کے یکساں مواقع ہونے چاہئیں۔

وزیراعظم شہباز شریف نے کہا کہ افغانستان کے منجمد اثاثوں کو فوری بحال کیا جانا چاہیے، افغانستان میں پُرامن حالات پاکستان میں بھی امن کی ضمانت ہیں۔روس یوکرین جنگ سے متعلق بات کرتے ہوئے وزیراعظم  نے کہا کہ روس، یوکرین جنگ کے باعث دنیا کو تیل اور اناج کے بحران کا سامنا کرنا پڑا۔

مزید :

قومی -