پرانی سیاسی جماعتیں نوجوانوں کا مقابلہ نہیں کرسکتیں ، زرداری مال بنانے آیا، بجلی دینا صوبائی حکومت کی ذمہ داری تھی: عمران خان

پرانی سیاسی جماعتیں نوجوانوں کا مقابلہ نہیں کرسکتیں ، زرداری مال بنانے آیا، ...
پرانی سیاسی جماعتیں نوجوانوں کا مقابلہ نہیں کرسکتیں ، زرداری مال بنانے آیا، بجلی دینا صوبائی حکومت کی ذمہ داری تھی: عمران خان

  

پاکپتن (مانیٹرنگ ڈیسک) پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہاکہ پرانی سیاسی جماعتیں نوجوانوںکا مقابلہ نہیں کرسکتیں ،باریاں لینے والے کچھ نہیں کرسکتے ، بجلی ، گیس دینا اورکرپشن ختم کرنا صوبائی حکومت کی ذمہ داری تھی ، زرداری تو مال بنانے آیاتھا۔جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان نے کہاکہ پانچ باریاں لے چکے ہیں اور اب تک بجلی کانظام بہتر نہیں ہوسکا، اٹھارہ ،اٹھارہ گھنٹوں کی لوڈشیڈنگ جاری ہے ۔اُنہوں نے نواز شریف کو مخاطب کرتے ہوئے کہاکہ ستر ارب روپے سے جنگلہ بس سروس بعد میں بھی چل سکتی تھی ، بجلی پہلے بنائی جانی تھی جس کی وجہ سے فیکٹریاں بند ، مزدور بے روز گار، ٹیوب ویل بند اور طلباءتعلیم کے حصول سے عاری ہیں ،شوبازی بعد میں بھی ماری جاسکتی تھی ، میاں برادران سے پٹواریوں کے بغیر جلسہ نہیں ہوتا ۔ اُن کاکہناتھاکہ ساری دنیا میں سیاستدانوں کا ٹی وی پر مناظرہ ہوتاہے ، باربار دعوت کے باوجود لیگی قائدین ڈررہے ہیں ،وہ پہلے ہی ذرا کمزور ہیں اور پہلی گیند پر ہی وکٹ لیں گے۔ اُنہوں نے کہاکہ کرپشن ، پولیس اور بجلی دینا سب صوبائی حکومت کی ذمہ داری تھی ، زرداری تو مال بنانے آیااوراُس میں کامیاب رہا ، پلانٹ لگانے نہیں آیا، اوپرسے لڑائی اور اندر سے بھائی بھائی کی نوراکشتی جاری رہی ۔ عمران نے کہاکہ اب لوگوں کو ڈراتے پھرتے ہیں کہ زرداری جن آجائے گا، بس کرو، میاں صاحب ، جان دیو۔ ۔۔ ۔۔ اُن کاکہناتھاکہ نواز شریف جعلی سروے کراتے ہیں ، عوام فیصلہ کرچکے ، گیارہ تاریخ کو سہہ پہر ووٹنگ جاری ہوگی اور شام کو جشن ہوگا۔اُنہوں نے کہاکہ ہندوستان کی حکومت اپنے کسانوں کی مدد کرتی ہے ، ٹیوب ویل کو سستی بجلی اور کسان کو سستی کھاد و بیج دیتے ہیں جس کی وجہ سے ہندوستان کے پنجاب میں دگنی پیداوارہے ، ہم چھوٹے کسان کو پیسہ بنانے کا موقع دیں گے ۔ پی ٹی آئی کے چیئرمین نے کہاکہ نئے نظام میں ترقیاتی فنڈگاﺅں کی سطح پر لوگوں کو دیں گے ، گاﺅں سے ترقی ہوگی ،ا ٓپ کو عرضیاں لے کر ایم پی اے کے پیچھے نہیں جاناپڑے گا، کوئی اپنا تھانیدار نہیں رکھواسکے گا۔

مزید : پاکپتن /اہم خبریں