پاکستانی امپائر ندیم غوری پرعائد پابندی ختم کرنے پر غور

پاکستانی امپائر ندیم غوری پرعائد پابندی ختم کرنے پر غور

لاہور( سپورٹس رپورٹر ) پی سی بی نے امپائر ندیم غوری پر کرپشن کیس میں عائد پابندی 6 ماہ قبل ہی ختم کرنے پر غور شروع کر دیا۔تفصیلات کے مطابق اکتوبر2012 میں6 امپائرز کو کرپشن کی جانب مائل پایا گیا تھا، ان میں سے4 کا تعلق بنگلہ دیش اور سری لنکا سے تھا جبکہ پاکستان کے ندیم غوری اور انیس صدیقی بھی مذکورہ آفیشلز میں شامل تھے۔آئی سی سی نے الزام کی زد میں آنے والے امپائرز کو معطل کر دیا،پی سی بی نے بھی اپنے دونوں آفیشلز کو ڈومیسٹک میچز سپروائز کرنے سے روکتے ہوئے اس وقت کے ڈائریکٹر سیکیورٹی اینڈ ویجلنس احسان صادق کی زیرسربراہی کمیٹی کو معاملہ سونپ دیا تھا،اس کے ارکان نے تحقیقات کے بعد محسوس کیاکہ دونوں من پسند امپائرنگ فیصلوں کیلیے رقم وصول کرنے کیلئے تیار تھے، لہذا ندیم پر چار اور انیس پر تین سالہ پابندی عائد کر دی گئی تھی، اس کا اطلاق 11 اکتوبر 2012 سے ہوا، انیس کی سزا ختم ہو چکی البتہ ندیم غوری کے ابھی6 ماہ باقی ہیں۔انھوں نے انسانی ہمدردی کی بنیاد پر پی سی بی سے اپیل کی کہ سزا ختم کر دی جائے تاکہ وہ دوبارہ امپائرنگ سے گذربسر کر سکیں،ذرائع نے بتایا کہ چیئرمین شہریارخان نے گورننگ بورڈ کے تمام ارکان کوایک خط بھیج کر رضامندی معلوم کی ہے کہ کیا ندیم غوری پر عائد پابندی ختم کرکے انھیں ڈومیسٹک میچز میں فرائض انجام دینے کی اجازت دے دی جائے۔

مزید : کھیل اور کھلاڑی