سابق ڈائر یکٹر جنرل کی تعلیمی اسناد ہائیر ایجوکیشن سے غیر مصدقہ ہونے کا انکشاف

سابق ڈائر یکٹر جنرل کی تعلیمی اسناد ہائیر ایجوکیشن سے غیر مصدقہ ہونے کا ...

  



پشاور(نیوزرپورٹر)قومی احتساب بیورو خیبرپختونخوا کے سابق ڈائریکٹرجنرل سلیم شہزادکی تعلیمی اسناد ہائیرایجوکیشن کمیشن سے غیرمصدقہ ہونے کاانکشاف ہواہے یہ انکشاف اسسٹنٹ اٹارنی جنرل آف پاکستان طارق منصور نے پشاورہائی کورٹ کے چیف جسٹس یحیی آفریدی اور جسٹس اعجازانور پرمشتمل دورکنی بنچ کے روبرودرخواست گذار انجینئرغنی گل محسودحیات آباد ریذیڈنٹ سوسائٹی کے نمائندے کی جانب سے دائررٹ کی سماعت کے دوران کیااس موقع پر اسسٹنٹ اٹارنی جنرل آف پاکستان طارق منصورعدالت میں پیش ہوئے اورہائیرایجوکیشن کمیشن کی جانب سے بتایا کہ درخواست گذار نے سابق ڈی جی نیب سلیم شہزادکے تعلیمی کوائف سے متعلق جو معلومات مانگی ہیں اس کے مطابق ایم ایس سی کمپیوٹرسائنس سیشن2000-2002ء جو الخیریونیورسٹی نے جاری کی اوراسے ہائیرایجوکیشن کمیشن کی جانب سے تصدیق نہیں کرائی گئی جبکہ سلیم شہزاد کی ہائیرایجوکیشن کمیشن پشاورآفس سے ایک تعلیمی اسناد بھی تصدیق شدہ نہیں ہے اس موقع پر چیف جسٹس نے درخواست گذار کے وکیل کو بتایا کہ شہزادسلیم کوبائی نام فریق نہیں بنایاگیاجبکہ ان کے بحیثیت ڈی جی نیب تقرری کو مفادعامہ کے تحت چیلنج کیاجاسکتاہے عدالت عالیہ کے دورکنی بنچ نے ان ہدایات کے ساتھ رٹ پٹیشن نمٹادی ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...