ہائیکورٹ بار کو ایک کروڑ گرانٹ ادا نہ کرنے پر سیکرٹری خزانہ 26 اپریل کو طلب

ہائیکورٹ بار کو ایک کروڑ گرانٹ ادا نہ کرنے پر سیکرٹری خزانہ 26 اپریل کو طلب

  



پشاور(نیوزرپورٹر)پشاورہائی کورٹ کے جسٹس قیصررشید اور جسٹس اکرام اللہ پرمشتمل دورکنی بنچ نے وزیراعلی خیبرپختونخوا پرویزخٹک کی جانب سے پشاورہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کے لئے اعلان کردہ ایک کروڑ روپے کی گرانٹ تاحال ادا نہ کرنے پر صوبائی سیکرٹری قانون اورسیکرٹری خزانہ کو26اپریل کو عدالت طلب کرلیاہے فاضل بنچ نے پشاورہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کی جانب سے بار کے جنرل سیکرٹری رحمان اللہ ایڈوکیٹ کے توسط سے دائررٹ کی سماعت کی اس موقع پر عدالت کو بتایاگیاکہ خیبرپختونخوا کے وزیراعلی پرویزخٹک نے مارچ2016 میں پشاورہائی کورٹ بار کے دورہ کے موقع پر بار کے لئے ایک کروڑ روپے گرانٹ کااعلان کیاتھالیکن تاحال اس پرعملدرآمد نہیں ہوا اور اتناعرصہ گذرنے کے باوجود وزیراعلی اپناوعدہ ایفانہیں کرسکے لہذاگرانٹ جاری کرنے کے احکامات جاری کئے جائیں اورآرٹیکل62ا ور63پرپورانہ اترنے پروزیراعلی کو نااہل قرار دیا جائے اس موقع پر جسٹس قیصررشید نے اپنے ریمارکس میں کہاکہ اگروزیراعلی اپنے وعدے ایفانہیں کرسکتے تو پھراعلانات کیوں کرتے ہیں جو اعلان کیاہے اس پرعملدرآمد کرناچاہئیے فاضل بنچ نے بعدازاں سیکرٹری قانون اورسیکرٹری خزانہ کو 26اپریل کو عدالت طلب کرتے ہوئے سماعت اگلی پیشی تک ملتوی کردی ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر