اثاثہ جات ریفرنس: استغاثہ گواہ کا قلمبند بیان ضمنی ریفرنس ریکارڈ کا حصہ بنادیا گیا

اثاثہ جات ریفرنس: استغاثہ گواہ کا قلمبند بیان ضمنی ریفرنس ریکارڈ کا حصہ ...
اثاثہ جات ریفرنس: استغاثہ گواہ کا قلمبند بیان ضمنی ریفرنس ریکارڈ کا حصہ بنادیا گیا

  



اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن) احتساب عدالت میں سابق وزیر خزانہ اسحاق ڈار کے خلاف اثاثہ جات ریفرنس کی سماعت کے دوران استغاثہ کے گواہ محمد عظیم کے مرکزی ریفرنس میں قلمبند کرائے گئے بیان کو ہی ضمنی ریفرنس میں بھی ریکارڈ کا حصہ بنا دیا گیا۔

واضح رہے کہ نیب کی جانب سے 26 فروری 2018 کو دائر کیے گئے اثاثہ جات ضمنی ریفرنس میں نیشنل بینک کے سابق صدر سعید احمد، نعیم محمود اور منصور رضا رضوی کو بطور شریک ملزمان نامزد کیا گیا تھا۔احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے آج اسحاق ڈار کے خلاف ضمنی ریفرنس پر سماعت کی۔سماعت کے دوران ضمنی ریفرنس میں نامزد ملزمان نعیم محمود اور منصور رضا عدالت میں پیش ہوئے۔احتساب عدالت میں آج استغاثہ کے گواہ عبدالرحمان گوندل کا بیان قلمبند کیا گیا۔دوسری جانب گواہ محمد عظیم کے مرکزی ریفرنس میں قلمبند کرائے گئے بیان کو ہی ضمنی ریفرنس میں بھی ریکارڈ کا حصہ بنا دیا گیا۔

گواہ محمدعظیم نے عدالت کو بتایاکہ 25 مارچ 2005 کو 17 لاکھ ،21 جنوری 2014 کا9 لاکھ ،20 ستمبر 2005 کو 42 لاکھ ،25 مارچ 2011 کو 8 لاکھ 50 ہزاراور20 جون 2011 کو 8 لاکھ 50 ہزارورپے اسحاق ڈار کے اکاﺅنٹ میں منتقل ہوئے۔گواہ کا کہناتھا کہ جو چیک میں نے پیش کئے وہ اسحاق ڈار کے ذاتی اکاﺅنٹس ہیں ،سابق وزیر خزانہ کے وکیل کی جرح مکمل ہونے پر عدالت نے کیس کی سماعت 2 مئی تک ملتوی کردی۔

مزید : قومی /علاقائی /اسلام آباد


loading...