سابق ایس ایس پی ملیر راؤ انوار نقیب اللہ محسود کا قاتل قرار ،جے آئی ٹی رپورٹ نے بھانڈا پھوڑ دیا

سابق ایس ایس پی ملیر راؤ انوار نقیب اللہ محسود کا قاتل قرار ،جے آئی ٹی ...
سابق ایس ایس پی ملیر راؤ انوار نقیب اللہ محسود کا قاتل قرار ،جے آئی ٹی رپورٹ نے بھانڈا پھوڑ دیا

  



کراچی(ڈیلی پاکستان آن لائن) کراچی میں جعلی پولیس مقابلے میں قتل کئے جانے والی شمالی وزیرستان کے خوبرو نوجوان نقیب اللہ محسود کا قتل رنگ لے آیا ،کیس کی تفتیش کرنے والی مشترکہ تحقیقاتی ٹیم نے اس کیس میں سابق ایس ایس پی ملیر راؤ انوار کو ماورائے عدالت کا ذمہ دار ٹھہراتے ہوئے پولیس ٹیم کیاس عمل کو دہشت گردی قرار دیدیا۔

نجی ٹی وی چینل ’’جیو نیوز ‘‘ کی رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ سندھ پولیس کے ایڈیشنل آئی جی آفتاب پٹھان کی سربراہی میں قائم جے آئی ٹی نے اپنی رپورٹ تیار کرلی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ اس کیس کی تحقیقات کے بعد یہ بات ثابت ہو چکی ہے کہ نقیب اللہ محسود کے ساتھ مارے گئے چاروں نوجوانوں کو جھوٹے اور جعلی مقابلے میں قتل کیا گیا ،جے آئی ٹی کو نقیب اللہ محسود اور اس کے ساتھ مارے گئے نوجوانوں میں سے کسی ایک کے خلاف بھی کوئی کریمنل ریکارڈ نہیں ملا۔جے آئی ٹی رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ ڈی این اے رپورٹ سے بھی چاروں افراد کا الگ الگ قتل ثابت ہوتا ہے، چاروں افراد کو دو الگ الگ کمروں میں قتل کیا گیا، ایک کمرے کے قالین پر دو افراد جب کہ دوسرے کمرے کے قالین پر چاروں مقتولین کے خون کے شواہد ملے جس سے ثابت ہوتا کہ چاروں افراد کو جھوٹے پولیس مقابلے میں قتل کیا گیا اور بعد میں لاشیں دو مختلف کمروں میں ڈال دی گئیں جبکہ مقتول نظر جان کے کپڑوں پر موجود گولیوں کے سوراخ کی فرانزک رپورٹ کو بھی اس تفتیش کا حصہ بنایا گیا ہے جس میں بتایا گیا ہے کہ مقتول نظر جان پر ایک سے پانچ فٹ کے فاصلے سے فائرنگ کی گئی،جے آئی ٹی نے اپنی رپورٹ میں ڈی پی او بہاولپور کی رپورٹ کا بھی ذکر کیا ہے۔جے آئی ٹی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ راؤ انوار نے نقیب اللہ ود یگر نوجوانوں کو ماورائے عدالت قتل کیا، راؤ انوار اور دیگر پولیس افسران کا یہ عمل دہشت گردی ہے،اس ماورائے عدالت قتل کو تحفظ دینے کے لئے انہوں نے میڈیا میں جھوٹ بولا اور اس قتل کے بعد راؤ انوار اور دیگر پولیس افسران و اہلکاروں نے شواہد ضائع کئے۔رپورٹ کے مطابق راؤ انوار اور دیگر ملزمان نے اپنے اختیارات کا بھی ناجائز استعمال کیا، ملزمان کا مقصد اپنے دیگر غیر قانونی اقدامات کو تقویت اور دوام پہنچانا تھا،جے آئی ٹی نے رپورٹ کی تیاری میں جیو فینسنگ اور فرانز ک رپورٹ کا سہارا لیا ہے۔رپورٹ کے مطابق مشترکہ تحقیقاتی کمیٹی نے راؤ انوار کی گرفتاری کے بعد اس کے ہمراہ بھی جائے وقوعہ کا دورہ کیا، ملزم کیس میں ملوث نہ ہونے کا کوئی ثبوت پیش نہ کرسکا جب کہ پوچھ گچھ کے دوران ملزم راؤ انوار نے ٹال مٹول سے کام لیا۔

مزید : علاقائی /سندھ /کراچی /اہم خبریں /قومی