”میں ثانیہ مرزا کا بہت بڑا فین ہوں ،ایک مرتبہ وہ ایک اشتہار کی شوٹنگ کیلئے آئیں، وہ سیٹ پر بیٹھی سیب کھا رہیں تھیں تو مجھے آواز دے کر کہنے لگیں کہ ۔۔۔“بھارتی اداکار ورن دھون نے ماضی کا ایک ایسا واقعہ سنا دیا کہ سن کر شعیب ملک کی اہلیہ بھی دنگ رہ جائیں گی

”میں ثانیہ مرزا کا بہت بڑا فین ہوں ،ایک مرتبہ وہ ایک اشتہار کی شوٹنگ کیلئے ...
”میں ثانیہ مرزا کا بہت بڑا فین ہوں ،ایک مرتبہ وہ ایک اشتہار کی شوٹنگ کیلئے آئیں، وہ سیٹ پر بیٹھی سیب کھا رہیں تھیں تو مجھے آواز دے کر کہنے لگیں کہ ۔۔۔“بھارتی اداکار ورن دھون نے ماضی کا ایک ایسا واقعہ سنا دیا کہ سن کر شعیب ملک کی اہلیہ بھی دنگ رہ جائیں گی

  

ممبئی (ڈیلی پاکستان آن لائن)بالی ووڈ ایسی فلم انڈسٹری بن چکی ہے کہ کسی بھی فنکار کو راتوں رات شہرت کی بلندیوں پر پہنچا دیتی ہے، بالی وڈ کے نئی نسل کے اداکاروں میں سے ورن دھون کا بھی ایسے ہی خوش قسمت ترین افراد میں ہوتا شمار ہوتا ہے جنہوں نے انتہائی قلیل مدت میں جتنی شہرت حاصل کی وہ کسی دوسرے فنکار کے حصے میں نہیں آ سکی ،ورن دھون کا ہندوستانی فلم انڈسٹری میں آج بڑے سٹار ز میں شمار ہوتا ہے اور ان کے آج لاکھوں چاہنے والے ہیں لیکن چند سال پہلے تک ورن دھون خود ہندوستان کی معروف ٹینس سٹار اور پاکستانی کرکٹر شعیب ملک کی اہلیہ ثانیہ مرزا کے نہ صر ف بہت بڑے فین تھے بلکہ ایک مرتبہ تو انہوں نے ثانیہ مرزا کی ’’توجہ ‘‘ حاصل کرنے کے لئے کئی گھنٹے مارکیٹ میں خوار ہوتے گذار دیئے تھے تاہم دن بھر کی مارا ماری کے صلے میں ثانیہ مرزا نے انہیں ایسی چیز دے دی تھی کہ آپ بھی ہنس ہنس کر بے حال ہو جائیں گے ۔

بھارتی نجی ٹی وی کے مطابق ورن آج بالی وڈ کے بڑے سٹار  اور ان کے بے شمار چاہنے والے ہیں لیکن ایک دور ایسا بھی تھا جب ورن خود ٹینس کھلاڑی ثانیہ مرزا کے بہت بڑے فین ہوا کرتے تھے۔ ایک بار تو ورن نے ثانیہ مرزا کی توجہ حاصل کرنے اور ان کی گڈ بک میں آنے کے لئے کئی گھنٹوں تک سڑکوں پر جوتوں کے ڈھائی سو جوڑے ڈھونڈتے گذار دیئے تھے ۔یہ اس وقت کی بات ہے جب ورن نے بالی ووڈ فلموں میں بطور ہیرو ڈیبیو نہیں کیا تھا اور وہ پروڈکشن ہاؤس میں انڈسٹری کی باریکیاں سیکھ رہے تھے۔ایک انٹرویو کے دوران ورن نے اس بارے میں انکشاف کرتے ہوئے کہا کہ جب میں نے اسسٹنٹ کے طور پر فلم انڈسری میں قدم رکھا تھا تو ہرروز صبح 6 بجے اپنے گھر جوہو(ممبئی میں ایک جگہ) سے ورلی جایا کرتا تھا،مجھے اس بات کا خاص خیال رکھنا پڑتا تھا کہ کہیں سٹاپ پر پہنچنے سے پہلے ہی بس نہ چھوٹ جائے کیونکہ ٹیکسی میں جانے کے لئے میرے پاس پیسے نہیں ہوتے تھے ۔ورن کا کہنا تھا کہ ایک بارمیری پروڈکشن ٹیم نے مجھے کہا کہ میں لنکن روڈ ممبئی کی مارکیٹ میں کسی دوکاندار سے بات کر کے 250کے قریب جوتوں کے جوڑے لیکر آؤں کیونکہ ان جوتوں کے ساتھ مشہور ٹینس سٹار ثانیہ مرزا ایک ایڈ شوٹ کرنے والی تھیں، وہ سارے جوتے بیک گراؤنڈ میں دکھائے جانے تھے۔ ان دنوں پورے ہندوستان میں ثانیہ مرزا کا بہت کریز تھا،میں بھی ثانیہ مرزا کا نام سن کر خوشی خوشی جوتے لینے نکل پڑا، مجھے لگا کہ میں ایسا کرکے ثانیہ مرزا کی توجہ حاصل کر لوں گا اور ان کو متاثر کر دوں گا۔

ورن نے کہا میں نے اس دن تقریباً وہاں کی ہر دکان میں جوتوں کے لیے پوچھا لیکن کوئی دوکان دار بھی پیسوں کے بغیر مجھے جوتے دینے کو تیار نہیں تھا۔ دکان داروں کا کہنا تھا کہ میں انہیں ایڈوانس میں کچھ پیسے جمع کراؤں تاکہ اگر ان کے جوتے خراب ہوں تو وہ ایڈوانس جمع کرائے گئے پیسے ضبط کر لیں ،جوتوں کی تلاش میں کئی گھنٹے تک میں مارکیٹ میں مارا مارا پھرتا رہا ، بڑی مشکل سے ایک دکان والے کو میں نے راضی کر لیا اور جوتے لے کر پروڈکشن والوں کو دے دیئے۔ورن کا کہنا تھا کہ مارکیٹ سے جب میں جوتے لے کر آ رہا تھا تو خوشی سے میرے پاؤں زمین پر ہی نہیں لگ رہے تھے ،مجھے ایسا محسوس ہو رہاتھا کہ شائد ثانیہ مرزا کا یہ فوٹو شوٹ صرف میری وجہ سے ہی ممکن ہو پا رہا ہے کیونکہ میں نے جوتے حاصل کرنے کے لئے بہت محنت کی تھی لیکن میری ساری محنت پر اس وقت پانی پھر گیا جب ڈائریکٹر نے یہ کہہ کر سیٹ ہی بدل دیا کہ ان جوتوں کی وجہ سے سیٹ کی لوکیشن بہت بھدی محسوس ہو رہی ہے ، مجھے ایسا لگا کہ ڈائریکٹر نے ایک ہی جملے میں میری زندگی کا سب سے بڑا خواب چکنا چور کر دیا ہے ،اس دن میرا دل ٹوٹ گیا اور مجھے یہ احسا س بھی ہوا کہ منزل حاصل کئے بغیر انسان کو خیالی فضاؤں میں نہیں اڑنا چاہئے ۔ورن کا کہنا تھا کہ گوکہ میرے لائے ہوئے ڈھائی سو جوتوں  کی محنت صرف اتنا رنگ لائی کہ سیٹ پر بیٹھی ہوئی ثانیہ مرزا نے خوش ہو کر مجھے ایک سیب کھانے کو دیا تو میری خوشی کا کوئی ٹھکانہ ہی نہ تھا۔

مزید :

تفریح -