نیب نے پیپلز پارٹی کے قومی اور صوبائی اسمبلی کے دو اراکین کے خلاف تحقیقات شروع کردی ، نوٹس جاری

نیب نے پیپلز پارٹی کے قومی اور صوبائی اسمبلی کے دو اراکین کے خلاف تحقیقات ...
نیب نے پیپلز پارٹی کے قومی اور صوبائی اسمبلی کے دو اراکین کے خلاف تحقیقات شروع کردی ، نوٹس جاری

  

سکھر(ڈیلی پاکستان آن لائن)قومی احتساب بیورو (نیب) سکھرنے پیپلز پارٹی کے رکن قومی اسمبلی نواب زادہ میر عامر خان مگسی اور رکن صوبائی اسمبلی سندھ میر نادر مگسی کو ریڈار پر لیتے ہوئے ان کے خلاف تحقیقات کا آغاز کردیاہے ، متعلقہ اداروں سے قمبر شہدادکوٹ ضلع میں پانچ سالوں کے دوران ہونے والے ترقیاتی کاموں کی تفصیلات طلب کرلیں۔

تفصیلات کے مطابق نیب نے رکن قومی اسمبلی میر عامر خان مگسی اور رکن سندھ اسمبلی وسابق صوبائی وزیر میر نادرمگسی کے خلاف کرپشن کی تحقیقات شروع کر تے ہوئے2008ءسے 2013ءتک قمبر شہداد کوٹ کی ترقیاتی سکیموں کا ریکارڈ طلب کر لیا ہے۔نیب ذرائع کا کہنا ہے کہ میر نادر مگسی نے قمبر شہداد کوٹ کے منصوبوں کے دو ارب روپے جھل مگسی منتقل کرائے اور دو ارب کے ترقیاتی منصوبے من پسند ٹھیکے داروں کو دیئے جبکہ 2010ءمیں سیلاب سے تباہ سڑکوں کے ٹھیکے بلاول شیخ و دیگر کو دیے گئے۔

 نیب نے ڈی سی قمبر شہداد کوٹ سے 2008ءسے 2013ءتک کا ریکارڈ بھی طلب کر لیا ہے، نیب نے استفسار کیا ہے کہ 2008ءسے 2013 ءتک مزید 850 ملین روپے شہر کے لیے آئے وہ کہاں گئے؟۔نیب نے نوٹس جاری کیا ہے کہ 29 اپریل کو ڈی سی قمبر شہداد کوٹ یا ان کا کوئی نمائندہ ریکارڈ سمیت حاضر ہو اور ٹھیکے داروں کو دیے گئے ٹھیکوں کی تفصیلات فراہم کی جائیں۔نیب نے پوچھا ہے کہ قمبر شہداد کوٹ کادو ارب روپے کا ترقیاتی فنڈ جھل مگسی کیسے منتقل ہوا؟ اربوں روپے کا ترقیاتی فنڈ کہاں استعمال ہوا؟ اس سب کی تفصیل فراہم کی جائے، نیب سکھر نے عامر مگسی اور نادر مگسی کی اسکیموں کی فہرست بھی طلب کی ہے۔

مزید :

علاقائی -سندھ -سکھر -