اعلی عدلیہ میں ججوں کی تعیناتیاں مخصوص چیمبرز سے نہیں ہونی چاہئیں، فاروق ایچ نائیک

اعلی عدلیہ میں ججوں کی تعیناتیاں مخصوص چیمبرز سے نہیں ہونی چاہئیں، فاروق ایچ ...

لاہور(نامہ نگارخصوصی)سپریم کورٹ بار کے صدارتی امیدوار اور سابق چیئرمین سینیٹ فاروق ایچ نائیک نے کہا ہے کہ اعلیٰ عدلیہ میں ججوں کی خالی اسامیاں مخصوص چیمبرز کی بجائے اہل امیدواروں کے ذریعے پر کرنے کے لئے آئین میں ترامیم ہونی چاہئیں،سیای وابستگی سے بالاتر ہو کروکلاء کی فلاح و بہبود میرا مشن ہے۔میڈیاسے گفتگو کرتے ہوئے فاروق ایچ نائیک نے کہا کہ وکلاء کو دہشت گردی اور ٹارگٹ کلنگ کا سامنا ہے مگر بدقسمتی سے وکلاء کے تحفظ کے لئے اقدامات نہیں کئے جا رہے۔انہوں نے کہا کہ دہشت گردی اور ٹارگٹ کلنگ سے متاثرہ وکلاء کے اہل خانہ کو تحفظ فراہم کرنے اور ان کی مالی معاونت کے لئے قانون بننا چاہیے ۔انہوں نے کہا کہ ججوں کے تقرر سے متعلق آئین کے آٹیکل 175میں ترامیم کے لئے کام ہو رہا ہے ،اعلی عدلیہ میں ججوں کی تعیناتیاں مخصوص چیمبرز سے نہیں ہونی چاہئیں۔انہوں نے کہا کہ بار میں پلاٹوں کی سیاست کی کوئی گنجائش موجود نہیں ،پلاٹ ملنا ہر وکیل کا استحقاق ہے جو وکیل پلاٹ کی قیمت ادا نہیں کر سکتے انہیں قیمت میں رعائت ملنی چاہیے ، ایسے وکلاء پر کڑی شرائط عائد نہ کی جائیں۔ فاروق ایچ نائیک کا کہنا تھا کہ سیاسی جماعت سے وابستگی اپنی جگہ ،بار میں سیاست کرنے نہیں خدمت کے جذبے سے آیا ہوں۔

مزید : صفحہ آخر