وسیب کے معاشی استحصال کیخلاف ارکان اسمبلی کی خاموشی غداری کے مترادف ہے ‘ ظہور دھریجہ

وسیب کے معاشی استحصال کیخلاف ارکان اسمبلی کی خاموشی غداری کے مترادف ہے ‘ ...

ملتان (سٹی رپورٹر)ترقیاتی کاموں کے حوالے سے سرائیکی وسیب کو دیوار کے ساتھ لگا دیا گیا ہے، مسئلے پر غور کیلئے سیاسی جماعتوں کی کانفرنس بلا رہے ہیں ، یہ فیصلہ سرائیکستان قومی کونسل کے اجلاس میں کیا گیا۔ اجلاس میں اس پر سخت تشویش کا اظہار کیا گیا کہ سرائکی وسیب کے وسائل اپر پنجاب (بقیہ نمبر35صفحہ12پر )

میں خرچ کر کے اسے جاپان ، چین بنادیا گیا ہے جبکہ سرائیکی وسیب موہنجو دڑو اور ہڑپہ کا نقشہ پیش کر رہا ہے۔اجلاس کی صدارت پروفیسر شوکت مغل نے کی جبکہ مسیح اللہ خان جامپوری نے وسیب کی ترقیاتی صورتحال کا فنی فکری جائزہ پیش کیا اور ظہور دھریجہ نے تفصیلی رپورٹ میں بتایا کہ گزشتہ روز قومی اقتصادی کونسل کی ایگزیکٹو کمیٹی (ایکنک) نے 2 کھرب 98 کروڑ 90 لاکھ مالیت کے منصوبوں کی منظوری دی ، اس میں سرائیکی وسیب کا ایک بھی منصوبہ شامل نہیں اور اتنی کثیر رقم سے وسیب کو ایک روپیہ بھی نہیں ملا۔ انہوں نے کہا کہ حویلیاں ایکسپریس وے کے علاوہ لاہور سیالکوٹ موٹر وے کا منصوبہ اجلاس کے آخری دس منٹوں میں آیا اور فوری طور پر منظور کر لیا گیا جبکہ ملتان دیرہ غازی خان دو رویہ روڈ، ملتان، میانوالی موٹر وے اور بہاولنگر وہاڑی ، ملتان موٹر وے کے منصوبے بر سہا برس سے زیر التواء ہیں ، ان پر غور ہی نہیں کیا گیا ۔ ملتان کارڈیالوجی فیز ٹو، نشتر گھاٹ ، جلال پور ایکسپریس وے ،فورٹ منرو سیاحتی مرکز، بہاولپور رحیم یارخان ،ملتان کی زیر تعمیر یونیورسٹیاں ،بہاولنگر و بھکر میڈیکل کالج ،چوٹی زیریں و خانپور کیڈٹ کالج ، جھنگ، مظفر گڑھ موٹر وے کے منصوبے تعطل کا شکار ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ سرائیکی وسیب کا معاشی استحصال ہو رہا ہے، اس ظلم کے خلاف ارکان اسمبلی کی خاموشی غداری کے مترادف ہے۔ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ ترقیاتی منصوبوں میں وسیب کو نظر انداز کرنے پر مختلف سیاسی جماعتوں کا اجلاس بلایا جائے گا کہ جب تک صوبہ نہیں بنتا ، وسیب کے لوگ ظلم کا شکار ہوتے رہیں گے ۔ صوبے کے قیام کیلئے نوجوانوں کو آگے آنا ہوگا۔ اجلاس میں پروفیسر پرویز قادر خان ، طیب سیال، عابد سیال، رانا امیر علی امیر، سید رمضان شاہ ، سجاد ملک، افضا بٹ، عامر قادری ،عادل دھریجہ ، ناصر ببلو، عامر سلیم خان ، لطیف بھٹہ ، جمیل بھٹہ ،فہیم شاہ ، حنیف پپو، کاشف بھٹہ ، حاجی عید احمد دھریجہ، الطاف خان اور دوسرے موجود تھے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر