قانونی اور روحانی ماڈل

25 اگست 2018 (15:22)

ابویحییٰ

 دنیا میں خداکا قرب حاصل کرنے کے دوماڈل ہمیشہ زیادہ ممتاز رہے ہیں۔ ایک زندگی کے ہر معاملے میں قانون سازی کرکے اپنی زندگی کو خدا کی مرضی کے مطابق ڈھالنا۔ دوسراماڈل دنیا ہی کو چھوڑ کر رہبانیت کو اختیار کرلینا۔ پہلے ماڈل کا نمونہ یہودیت ہے اور دوسرے ماڈل کا نمونہ مسیحیت ہے۔پہلے ماڈل کو دین کا قانونی ماڈل اور دوسرے کو روحانی ماڈل کہا جاسکتا ہے۔

 پہلے ماڈل میں شریعت کے اصل مطالبات قانونی مطالبات میں اس طرح دب جاتے ہیں کہ پتہ ہی نہیں چلتا کہ خدا نے کیا کہا ہے اور انسانوں نے کیا قانون سازی کی ہے۔ قرآن مجید نے اسی بے جا قانون سازی کو اصرار واغلال قرار دے کر دنیا کو ان سے رہائی عطا کی۔ چنانچہ یہی وجہ ہے کہ قرآن مجید جیسی ضخیم کتاب میں قانونی احکام کی تعداد بہت کم ہے۔

 دوسرے ماڈل میں ترک دنیا پارسائی کا معیار قرار پاتا ہے۔ چلے کاٹنا، وظائف پڑھنا، کشف وکرامات، خواب اور بشارتیں دین کا اصل نقطہ کمال بن جاتی ہیں۔گھر چھوڑدینا، نفس پر بے جا مشقت ڈالنا، زینتوں اور خوبصورتی کو ترک کردینا دینی مطالبات بن جاتے ہیں۔

قرآن مجید نے اس پورے تصور کو بھی جڑ سے اکھاڑپھینکا ہے۔قرآن مجید کی روحانیت صرف اور صرف اللہ سے زندہ تعلق کا نام ہے۔یہ غیب میں پوشیدہ خدا کو ہمہ وقت علیم و خبیر سمجھ کر زندگی گزارنا ہے۔ یہ دل کے حال اور زندگی کے ہر احوال سے واقف خدا کی نگرانی میں جینا ہے۔ یہ خدا سے سب سے بڑھ کر محبت کرنے، اپنی اطاعت کو اس کے لیے خالص کرکے اس کی عبادت کرنے کا نام ہے۔یہ بے روح وظیفوں کے بجائے دل کی تڑ پ کے ساتھ خدا کو پکارنے کا نام ہے۔ اس روحانیت میں بیوی، بچے، گھر،  مال، کاروبار اور زندگی کی ہر خوبصورتی کے ساتھ انسا ن روحانی انسان بن سکتا ہے۔ شرط یہ ہے کہ اپنے نفس کو کسی اخلاقی آلودگی سے ناپاک نہ کرے۔  آج بدقسمتی سے مسلمانوں نے قرآن مجید کے ماڈل کو چھوڑ کر یہودیت کے قانونی اور مسیحیت کے روحانی ماڈل کی پیروی شروع کردی ہے۔ مگر اصل نجات صرف قرآن کے ماڈل میں ہے۔

۔۔

نوٹ: روزنامہ پاکستان میں شائع ہونے والے بلاگز لکھاری کا ذاتی نقطہ نظر ہیں۔ادارے کا متفق ہونا ضروری نہیں۔

مزیدخبریں