سندھ اسمبلی نے فنانس ترمیمی بل 2020متفقہ طور پر منظور کر لیا

    سندھ اسمبلی نے فنانس ترمیمی بل 2020متفقہ طور پر منظور کر لیا

  

 کراچی (اسٹاف رپورٹر)سندھ اسمبلی نے پیر کو اپنے اجلاس کے دوران سندھ فنانس ترمیمی بل 2020متفقہ طور پر منظور کرلیا جو وزیر ریوینیو مخدوم محبوب الزماں نے پیش کیا تھا۔بل کے تحت سندھ میں کیپیٹیل ویلیو ٹیکس ختم کردیا گیا ہے جس سے تعمیراتی صنعت، رئیل اسٹیٹ کے شعبے کو فرو غ ملے گا۔بل کے تحت حکومت سندھ نے تعمیراتی شعبے کے لئے مختلف مراعات کا اعلان کیا ہے جس سے چالیس صنعتوں کو براہ راست فائدہ ہوگا۔ کپیٹل ویلیو ٹیکس غیر منقولہ جائیداد کی لیز، خرید وفروخت، منتقلی پر وصول کیا جاتا تھا۔اس ٹیکس سے سندھ حکومت کو اربوں روپے کی وصولی ہوتی تھی۔وزیر ریوینیو نے کہا کہ یہ قومی کاز ہے جس کے لئے حکومت سندھ نے قربانی دی اسکا سہرا چیئرمین پیپلزپارٹی کو جاتا ہے۔انہوں نے کہا کہ اس طرح کے اقدام وفاقی حکومت کو بھی ا ٹھانے چاہئیں۔ان کا کہنا تھا کہ صنعتی سیکٹر کیلئے سندھ حکومت نے 5 ارب ٹیکس کلیکشن کی قربانی دی ہے ہماری خواہش ہے کہ وفاق بھی سندھ کے مثبت اقدام کا مثبت جواب دے۔اپوزیش لیڈر فردس شمیم نقوی نے کہا کہ سندھ میں پراپرٹی ٹیکس کی ریکوری بہت زیادہ ہے،دوسرے صوبوں میں کتنا ٹیکس عائد ہے۔آج دوسرے صوبے زیادہ مراعات دے رہے ہیں اس لئے سرمایہ کار وہاں جارہے ہیں۔حیدراباد، سکھر لاڑکانہ میں بھی اس حوالے سے کام ہونا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ کنسٹریکشن انڈسٹری پر توجہ کی ضرورت ہے۔انہوں نے کہا کہ یہاں تجاویزات ختم۔کرنے کی بات ہورہی ہے یہی اعلان کردیں کے چھوٹے گھروں کی تعمیر کوئی ٹیکس نہیں لیا جائے گا۔ایم کیو ایم کے خواجہ اظہار نے کہا کہ آج اسلام آباد ائیر پورٹ کے اطراف پراجیکٹس نظر آتے ہیں، کراچی خشک ہے۔سی وی ٹی ختم کرنے کے ساتھ ودہولڈنگ ٹیکس میں چھوٹ بھی دی جائے تو اور اچھا ہوگا۔وفاق بھی ودہولڈنگ ٹیکس ختم کرے۔ ایم کیو ایم کے رکن جاوید حنیف نے کہا کہ کراچی کی تین اسکیمیں ادھوری پڑی ہیں،تیسر ٹاون، گلشن ملیر اور ہاکس بے اسکیموں میں ڈھائی لاکھ پلاٹ ہیں۔اگر ان اسکیموں میں تھوڑی سے ترقیاتی کام کئے جائیں تو بہت سے لوگ آباد ہونگے اور روزگار بھی بڑھے گا۔وزیر تعلیم سعید غنی نے کہا کہ سندھ حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ تجاویزات میں رہائش پزیر افراد کی رہائش کا پہلے بندوبست کیا جائے گا۔ان کا کہنا تھا کہ کراچی میں کثیر المنزلہ عمارتوں پر پابندی ہے پانی کے کنکشن نہیں ملتے دیگر شہروں میں یہ پابندیاں نہیں ہیں۔ایوان کی کارروائی کے دوران پینل آف چیئرمین کے شرجیل انعام میمن نے جو اجلاس کی صدارت کررہے تھے گورنر سندھ کی جانب سے سات بلوں کی منظوری کا اعلان کیا۔ایوان میں چار نئے بل بھی متعارف کرادیئے گئے۔ جن میں حصول اراضی کا ترمیمی، سندھ لینڈ روینیوترمیمی بل، سندھ ایکسپلوسوز بل اور سندھ کانٹریکٹ کی بنیاد پر بھرتی اساتذہ کی مستقلی کا ترمیم بل 2019شامل ہیں۔تمام بل مزید غور کے لئے قائمہ کمیٹی کے سپردکردیئے گئے۔

مزید :

صفحہ آخر -