آصف ہاشمی کیخلاف غیر قانونی سرمایہ کاری‘الاٹمنٹ کیسوں کی سماعت15ستمبر تک ملتوی

  آصف ہاشمی کیخلاف غیر قانونی سرمایہ کاری‘الاٹمنٹ کیسوں کی سماعت15ستمبر تک ...

  

لاہور(نامہ نگار)احتساب عدالت کے جج اسد علی نے سابق چیئرمین متروکہ وقف املاک بورڈ آصف ہاشمی کے خلاف کروڑوں روپے کی غیر قانونی سرمایہ کاری اور پلاٹوں کی الاٹمنٹ کے کیسوں کی سماعت15ستمبر تک ملتوی کردی، عدالت نے ملزمان کی جانب سے نیب ترمیمی آرڈیننس کی درخواست پر وکلا ء کو بحث کے لئے طلب کرلیاہے جبکہ ملزموں آئندہ سماعت پردوبارہ عدالت میں پیش ہونے کا حکم دیاہے،گزشتہ روزملزم آصف ہاشمی سمیت ضمانت پر رہا ہونے والے تمام ملزمان عدالت میں پیش ہوئے،نیب کی جانب سے نیب کے پراسیکیوٹر حارث قریشی عدالت میں پیش ہوئے،نیب کے مطابق ملزموں آصف ہاشمی سمیت دیگر ملزمان پر کروڑوں روپے کی سرمایہ کاری اور اربوں روپے کے پلاٹوں کی الاٹمنٹ کا الزام ہے،نیب کا موقف ہے کہ سابق چیئرمین متروکہ وقف املاک بورڈ کی ملی بھگت سے میسرز ہائی لنک میں 1870 ملین کی غیر قانونی انویسٹمنٹ کی گئی، ملزم کی جانب سے اختیارات کے ناجائز استعمال اور نجی کمپنی کو ناجائز مالی فائدہ پہنچانے کے شواہد ملے تھے دوسری جانب احتساب عدالت نے آصف ہاشمی کے خلاف محکمہ تعلیم میں میرٹ سے ہٹ کر بھرتی سکینڈل کیس کی سماعت5 ستمبر تک ملتوی کردی،عدالت نے ریفرنس کے گواہوں کو بیانات قلمبند کروانے کیلئے طلب کررکھا ہے اس کیس میں آصف ہاشمی پر فرد جرم عائد کی جاچکی ہے،نیب کے پراسیکیوٹر کے مطابق آصف ہاشمی پر بطور چئیرمین متروکہ وقف املاک بورڈ کے زیر نگرانی چلنے والے تعلیمی اداروں میں من پسند افراد کی بھرتیوں کا الزام عائد کیا گیا ہے۔ 

 ملزم آصف ہاشمی نے بطور چئیرمین ملازمین کو بھرتی کیا، ملزم آصف ہاشمی کے اس اقدام سے اپنے من پسند افراد کو نوازا گیا۔

 ملزم کی جانب سے اختیارات کا ناجائز استعمال کیا گیا، 

مزید :

علاقائی -