ٹوٹی ہے میری نیند مگر تم کو اس سے کیا

ٹوٹی ہے میری نیند مگر تم کو اس سے کیا
ٹوٹی ہے میری نیند مگر تم کو اس سے کیا

  

ٹوٹی ہے میری نیند مگر تم کو اس سے کیا

بجتے رہیں ہواؤں سے در تم کو اس سے کیا

تم موج موج مثل صبا گھومتے رہو

کٹ جائیں میری سوچ کے پر تم کو اس سے کیا

اوروں کا ہاتھ تھامو انہیں راستہ دکھاؤ

میں بھول جاؤں اپنا ہی گھر تم کو اس سے کیا

ابرِ گریز پا کو برسنے سے کیا غرض

سیپی میں بن نہ پائے گہر تم کو اس سے کیا

لے جائیں مجھ کو مال غنیمت کے ساتھ عدو

تم نے تو ڈال دی ہے سپر تم کو اس سے کیا

تم نے تو تھک کے دشت میں خیمے لگا لیے

تنہا کٹے کسی کا سفر تم کو اس سے کیا

شاعرہ: پروین شاکر

Tooti Hay Heri neend Magar Tumko Is Say Kya 

Bajtaay RaheN HawaaoN say Dar, Tumko is Say Kya 

Tum Maoj Maoj Mmisl  E  Sabaa Ghoomtay Rraho

Katt Jaaen Meri Soch K  Par, Tumko Is Say Kya 

Aoron Kka Haath Thaamo, Unhen R aasta Dikhaao

Main Bhool Jaaun  Apna Hi Ghar, Tumko Is Say Kya 

Abr   e   Guraiz Paa Ko Barasnay Say Kya Gharaz

Seepi  men Ban na Paaen Gohar  Tumko Is Say Kya 

Lay  jaaen  Mujhko Maal  e  Ghanimat kay Saath udu

TumNay To Daal Di Hay Sipar, Tumko Is Say Kya 

Tum Nay To Thak Kay Dasht  Men  Khaimen Laga liay

Tanha katay kisi Ka Safar, Tumko Is Say Kya 

Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -