بہت رویا وہ ہم کو یاد کرکے

بہت رویا وہ ہم کو یاد کرکے
بہت رویا وہ ہم کو یاد کرکے

  

بہت رویا وہ ہم کو یاد کرکے

ہماری زندگی برباد کرکے

پلٹ کر پھر یہیں آجائیں گے ہم

وہ دیکھے تو ہمیں آزاد کرکے

رہائی کی کوئی صورت نہیں ہے

مگر ہاں منتِ صیاد کرکے

بدن میرا چھوا تھا اُس نے لیکن

گیاے روح کو آباد کرکے

ہر آمر طول دینا چاہتا ہے

مقرر ظلم کی میعاد کرکے

شاعرہ: پروین شاکر

Bahut    Roya Wo  Ham ko Yaad Kar k 

Hamaari Zindagi Barbaad Kar K

Palat Kar Phir Yahin aa Jaaen Gay Ham

 Wo Daikhay  ToHamen Azaad Kar K

Rihaai Ki Koi Soorat Nahen Hay

     Magar Haan Minnat   e  Sayyaad Kar K

Badan Mera Chhua Tha Uss Nay Lekin

                     Gaya Hay rRooh Ko Abaad Kar K

                Har Aamir Tool Dena ChaahtaHay

Muqarrar Zulm Ki  Mayaad Kar K

Potess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -