چپ رہتا ہے وہ اور آنکھیں بولتی رہتی ہیں

چپ رہتا ہے وہ اور آنکھیں بولتی رہتی ہیں
چپ رہتا ہے وہ اور آنکھیں بولتی رہتی ہیں

  

چپ رہتا ہے وہ اور آنکھیں بولتی رہتی ہیں

اور کیا کیا بھید نظر کے کھولتی رہتی ہیں

وہ ہاتھ میرے اندر کیا موسم ڈھونڈتا ہے

اور انگلیاں کیسے خواب ٹٹولتی رہتی ہیں

اک وقت تھا جب یہی چاند تھا اور سناٹا تھا

اور اب یہی شامیں موتی رولتی رہتی ہیں

یاد آتی ہیں اس کی پیار بھری باتیں پھر

اور سارے بدن میں امرت گھولتی رہتی ہیں

شاعرہ: پروین شاکر

Chup Rehta hay wo Aor Ankhen Bolti Rehti Hen

Aor Kia Kia Bhaid Nazar K Kholti Rehti Hen

Wo Haath Niray Andar Kia Mosam Dhoondta Hay

Aor Ungliaan Kia Khaab  Tatolti Rehti Hen

Ik Waqt Tha Jab Yahi Chaand Tha Aor Sannaata Tha

Aor Ab Yahi Shaamen MOti Rolti Rehti Hen

Yaad Aati Hen  Uss Ki Payaar Bhari Baaten Shab Bhar 

Aor Saaray Badan Men Amrat Gholti Rehti Hen

Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -