آنکھوں نے کیسے خواب تراشے ہیں ان دنوں

آنکھوں نے کیسے خواب تراشے ہیں ان دنوں
آنکھوں نے کیسے خواب تراشے ہیں ان دنوں

  

آنکھوں نے کیسے خواب تراشے ہیں ان دنوں

دل پر عجیب رنگ اترتے ہیں ان دنوں

رکھ اپنے پاس اپنے مہ و مہر اے فلک

ہم خود کسی کی آنکھ کے تارے ہیں ان دنوں

دست سحر نے مانگ نکالی ہے بار ہا

اور شب نے آکے بال سنوارے ہیں ان دنوں

اس عشق نے ہمیں ہی نہیں معتدل کیا

اس کی بھی خوش مزاجی کے چرچے ہیں ان دنوں

اک خوشگوار نیند پہ حق بن گیا میرا

وہ رت جگے اس آنکھ نے کاٹے ہیں ان دنوں

وہ قحط حسن ہے کہ سبھی خوش جمال لوگ

لگتا ہے کوہ قاف پہ رہتے ہیں ان دنوں

شاعرہ: پروین شاکر

Aankhon Nay kaisay Khaab Taraashay Hen In Dino

Dil Per Ajeeb Rang Utray He n In Diono

Rakh Apnay paas apnay maah o  Mahar Ay Falak

Hum Khud Kisi Ki Aankh K Taaray He n In Diono

Dast e Sahar Nay Maang nikaali Hay Baarha

Aor Shab Nay Aa K Baal Sanwaaray Hen In  Dino

Is ishq Nay Hamen Hi Nahen Motadill Kia

Us Ki Bhi Khushmizagi k Charchay Hen In Dino

Ik khushgawaar Neend Pe Haq Ban Gaya Mira

Wo Rat Jagay Iss Aankh Nay Kaatay Hen In Dino

WO Qeht  e  Husn Hay Keh Sabhi Khush kjamaal  Log

Lagta Hay Kohqaaf Peh Rehtay  Hen In Dino

Potess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -