خیال و خواب ہوا برگ و بار کاموسم

خیال و خواب ہوا برگ و بار کاموسم
خیال و خواب ہوا برگ و بار کاموسم

  

خیال و خواب ہوا برگ و بار کاموسم

بچھڑ گیا تری صورت بہار کا موسم

کئی رُتوں سے مرے نیم وا دریچوں میں

ٹھہر گیا ہے ترے انتظار کا موسم

وہ نرم لہجے میں کچھ تو کہے کہ لَوٹ آئے

سماعتوں کی زمیں پر پھوار کا موسم

پیام آیا ہے پھر ایک سروقامت کا

مرے وجود کو کھینچے ہے دار کا موسم

وہ آگ ہے کہ مری پور پور جلتی ہے

مرے بدن کو مِلا ہے چنار کا موسم

رفاقتوں کے نئے خواب خُوشنما ہیں مگر

گُزر چکا ہے ترے اعتبار کا موسم

ہَوا چلی تو نئی بارشیں بھی ساتھ آئیں

زمیں کے چہرے پہ آیا نکھار کا موسم

وہ میرا نام لیے جائے اور میں اُس کا نام

لہو میں گُونج رہا ہے پکار کا موسم

قدم رکھے مری خُوشبو کہ گھر کو لَوٹ آئے

کوئی بتائے مُجھے کوئے یار کا موسم

وہ روز آ کے مجھے اپنا پیار پہنائے

مرا غرور ہے بیلے کے ہار کا موسم

ترے طریقِ محبت پہ با رہا سوچا

یہ جبر تھا کہ ترے اختیار کا موسم

شاعرہ: پروین شاکر

Khayal o Khaab Hu aBarg o baar Ka Maosam

Bicharr Gia Tiri Soorat Bahaar Ka Maosam

Kai Ruton Say Miray Neem Wa Dareeechon Say

Thehr Gia Hay Tiray Intezaar Ka Mosam

Wo Narm Lehjay Men Kuch To kahay Keh Laot Aaey

Samaaton ki Zameen Par Phuhaar Ka Mosam 

Payaam Aaya Phir Aik Sarv Qaamay ka

Miray Wajood Ko Khainchay Hay Daar Ka Mosam

Wo Aag hay Keh Miri Por Por Jalti Hay

Miray Badan Ko Mila Hay Chanaar  Ka Mosam

Rafaqton K Naey Khaab Khushnumaa Hen Magar

Guzar Chuka Hay Tiray Aitbaar Ka Mosam

Hawa Chali To Nai Baarshen Bhi Saath Aaen

Zameen K Chehray Pe Aaya Nikhaar  Ka Mosam

Wo MeraNaame Liay Jaaey aor Main Uss Ka Name

Lahoo Men Goonj Raha Hay Pukaar   Ka Mosam

Qadam Rakhay Miri Kushbu Keh ghar Laot aay

koi bataey Mujhay Koo e Yaar Ka Mosam

Wo Rose aa k Mujhay Apna Payaar Pehnaaey

Mira Gharoor Hay Bailay K H aar Ka Mosam

Tiray Tareeq  e  Muhabbat Pe Baarha Socha

Yeh Jabr Tha Keh Tiray Ikhtyaar Ka Mosam

Poetess:Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -