کوبہ کُو پھیل گئی بات شناسائی کی

کوبہ کُو پھیل گئی بات شناسائی کی
کوبہ کُو پھیل گئی بات شناسائی کی

  

کوبہ کُو پھیل گئی بات شناسائی کی

اُن نے خوشبو کی طرح میری پذیرائی کی

کیسے کہہ دوں کہ مُجھے چھوڑ دیا اُس نے

بات تو سچ ہے مگر بات ہے رُسوائی کی

وہ کہیں بھی گیا، لَوٹا تو مرے پاس آیا

بس یہی بات اچھی مرے ہرجائی کی

تیرا پہلو، ترے دل کی طرح آباد ہے

تجھ پہ گُزرے نہ قیامت شبِ تنہائی کی

اُس نے جلتی ہُوئی پیشانی پہ جب ہاتھ رکھا

رُوح تک آ گئی تاثیر مسیحائی کی

اب بھی برسات کی راتوں میں بدن ٹوٹتا ہے

جاگ اُٹھتی ہیں عجب خواہشیں انگڑائی کی

شاعرہ: پروین شاکر

Koo Ba Koo Phail Gai Baat Shanasaaee Ki

Uss Nay Khushboo Ki Trah Meri Pazeraaee Ki

Kaisay Keh Dun Keh Mujhay Chorr Dia Hay uss Nay

Baat To Sach Hay MAgar Baat Hay Ruswaaee Ki

Wo Kahen Bhi Gia Lota To Meray Paas Aaya

Bass Yahi Baat Hay Achi Miray Harjaaee Ki

Tera  Pehlu Tiray Dard Ki Trah Abaad Rahay

Tujh Pe Guzray Na Qayaamat Shab  e  Tanhaaee Ki

Uss Nay Jalti Hui Peshaani Pe Jab Haath Rakha

Rooh Tak Aa Gai Taseer Masihaaee Ki

Ab Bhi Barsaat Ki Raaton Men Badan Tootta Hay

Jaag Uthti Hen Ajab Khaahishen Angraaee Ki

Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -