دل پہ اک طرفہ قیامت کرنا​

دل پہ اک طرفہ قیامت کرنا​
دل پہ اک طرفہ قیامت کرنا​

  

دل پہ اک طرفہ قیامت کرنا​

مسکراتے ہوئے رخصت کرنا​

اچھی آنکھیں جو ملی ہیں اُس کو​

کچھ تو لازم ہوا وحشت کرنا​

جرم کس کا تھا سزا کس کو ملی​

کیا گئی بات پہ حجت کرنا​

کون چاہے گا تمھیں میری طرح​

اب کسی سے نہ محبّت کرنا​

گھر کا دروازہ کھلا رکھا ہے​

وقت مل جائے تو زحمت کرنا​

شاعرہ: پروین شاکر

Dil Pe Ik Turfa Qayaamat Karna

Muskaraatay Huay Rukhsat karna

Achi Aankhen Jo Mili Hen Uss Ko

Kuch To Laazim Hua Wehsat Karna

Jurm Kiss Ka Tha, Saza Kiss Ko Mili

Kya Gai Baat Pe Hujjat Karna

Kon Chaahay Ga Tumhen Meri Tarah

Ab Kisi Say Na Muhabbat Karna

Ghar Ka Darwaaza Khuala Rakha Hay

Waqt Mill Jaaey To Zehmat Karna

Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -