سوچوں تو وہ ساتھ چل رہا ہے

سوچوں تو وہ ساتھ چل رہا ہے
سوچوں تو وہ ساتھ چل رہا ہے

  

سوچوں تو وہ ساتھ چل رہا ہے

دیکھوں تو نظر بدل رہا ہے

کیوں بات زباں سے کہہ کے کھوئی

دل آج بھی ہاتھ مَل رہا ہے

راتوں کے سفر میں وہم سا تھا

یہ میں ہوں کہ چاند چل رہا ہے

ہم بھی ترے بعد جی رہے ہیں

اور تُو بھی کہیں بہل رہا ہے

سمجھا کے ابھی گئی ہیں سکھیاں

اور دل ہے کہ پھر مچل رہا ہے

ہم ہی بُرے ہو گئے کہ تیرا

معیارِ وفا بدل رہا ہے

پہلی سی وہ روشنی نہیں اب

کیا درد کا چاند ڈھل رہا ہے

شاعرہ: پروین شاکر

Sochun To Wo Saath Chall Raha Hay

Dekhun To Nazar Badall Raha Hay

Kiun Baat Zubaan Say Keh K Khoi

Dil Aaj Bhi Haath Mall Raha Hay

Raaton K Safar Men Wehm Sa Tha

Yeh Main Hun Keh Chaand Chall Raha Hay

Ham Bhi Tiray Baad G Rahay Hen

Aor Tu Bhi Kahen Bahal Raha Hay

Samjha k Abhi Gai Hen Sakhiaan

Aor Dill Hay Keh Phir Machall Raha Hay

Ham Hi Buray Ho Gay Keh Tera

Mayaar  e  Wafa badall Raha Hay

Pehli Si Wo Roshni Nahen Ab

Kya Dard Ka Chaand Dhall Raha Hay

Poetess:  Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -