جستجو کھوئے ہوؤں کی عمر بھر کرتے رہے

جستجو کھوئے ہوؤں کی عمر بھر کرتے رہے
جستجو کھوئے ہوؤں کی عمر بھر کرتے رہے

  

جستجو کھوئے ہوؤں کی عمر بھر کرتے رہے

چاند کے ہمراہ ہم ہر شب سفر کرتے رہے

راستوں کا علم تھا ہم کو نہ سمتوں کی خبر

شِہر نامعلوم کی چاہت مگر کرتے رہے

ہم نے خود سے بھی چھپایا اور سارے شہر کو

تیرے جانے کی خبر دیوار و دَر کرتے رہے

وہ نہ آئے گا ہمیں معلوم تھا،اس شام بھی

انتظار اس کا مگر کچھ سوچ کر،کرتے رہے

آج آیا ہے ہمیں بھی اُن اُڑانوں کا خیال

جن کو تیرے زعم میں  بے بال و پر کرتے رہے 

 شاعرہ: پروین شاکر

Justjoo Khoay Huon Ki Umr Bhar Kartay Rahay

Chaand K Hamraah Ham Har Shab Safar  Kartay Rahay

Raaston Ka Elm Tha Ham Ko Na Samton Ki Khabar

Shehr  e  Na Maloom Ki Chaahat Magar Kartay Rahay

Ham Nay Khud Say Bhi Chupaaya Aor Saaray Shehr Ko

Teray Jaanay Ki Khabar Dewaar  o  Dar Kartay Rahay

Wo na Aaey Ga Hamen Maloom Tha , Iss Shaam Bhi

Inzaar Uss Ka Magar Kuch Soch Kar Kartay Rahay

Aaj Aaya Hay Hamen Bhi Un Urraanon Ka Khayaal

Jin Ko Teray Zaam Men Bebaal  o  Par Kartay Rahay

Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -