تیرا گھر اور میرا جنگل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ

تیرا گھر اور میرا جنگل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ
تیرا گھر اور میرا جنگل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ

  

تیرا گھر اور میرا جنگل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ

ایسی برساتیں کہ بادل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ

بچپنے کا ساتھ ہے، پھر ایک سے دونوں کے دُکھ

رات کا اور میرا آنچل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ

وہ عجب دنیا کہ سب خنجر بکف پھرتے ہیں اور

کانچ کے پیالوں میں صندل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ

بارشِ سنگِ ملامت میں بھی وہ ہمراہ ہے

میں بھی بھیگوں، خود بھی پاگل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ

لڑکیوں کے دُکھ عجب ہوتے ہیں، سُکھ اُس سے عجیب

ہنس رہی ہیں اور کاجل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ

بارشیں جاڑے کی اور تنہا بہت میرا کساں

جسم کا اکلوتا کمبل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ

شاعرہ : پروین شاکر

Tera Ghar Aor MeraJungle Bheegta Hay Sath Sath

Aisi Barsaate n Keh Baadal Bheegta Hay Sath Sath

Bachpanay Ka Sath Hay ‘ Phir Aik Say Dono K Dukh

Raat Ka Aor  Mera Aanchal Bheegta Hay Sath Sath

Wo Ajab Dunya Keh Sab Khanjar Bakaf Phiray Hain Aor

Kaanch K P yalon Me n Sandal Bheegta hai Sath Sath

Barish  e  Sang   e   Malaamat Men Bhi Wo Humrah hay

Main  Bhi Bheegun, Khud Bhi Pagal Bheegta  haySath Sath

Larkiyon K  Dukh Ajab Hotay  Hain Sukh Uss Say Ajeeb

Hans Rahi Hain Aor Kaajal Bheegta hay Sath Sath

BaarishenJaarray  Ki Aor Tanha Bahut  Mera Kisaan

Jism Aor  Aklota KambalBheegta haySath Sath

Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -