وہ تو خوشبو ہے ، ہواؤں میں بکھر جائے گا

وہ تو خوشبو ہے ، ہواؤں میں بکھر جائے گا
وہ تو خوشبو ہے ، ہواؤں میں بکھر جائے گا

  

وہ تو خوشبو ہے ، ہواؤں میں بکھر جائے گا

مسئلہ پھُول کا ہے ، پھُول کدھر جائے گا

ہم تو سمجھے تھے کہ اِک زخم ہے ، بھر جائے گا

کیا خبر تھی کہ رگِ جاں میں اُتر جائے گا

وہ ہواؤں کی طرح خانہ بجاں پھرتا ہے

ایک جھونکا ہے جو آئے گا، گُزر جائے گا

وہ جب آئے گا تو پھر اُس کی رفاقت کے لیے

موسمِ گُل مرے آنگن میں ٹھہر جائے گا

آخرش وہ بھی کہیں ریت پہ بیٹھی ہو گی

تیرا یہ پیار بھی دریا ہے ، اُتر جائے گا

مجھ کو تہذیب کے برزخ کا بنایا وارث

جُرم یہ بھی مرے اجداد کے سر جائے گا

Woh To Khushboo Hay, Hawaaon Men Bikhar Jaaey  Ga

Masala   Phool Ka Hay Phool Kidhar Jaaey  Ga

Hum To  Samjhay Thay Keh Ik Zakhm Hay Bhar Jaaey  Ga

Kya Khabar Thi Keh Rag  e   Jaan Men Utar Jaaey Ga

Woh Hawaaon Ki Tarah Khana   Bajaan Phirta Hay

Aik Jhonka Hay Jo Aaey  Ga, Guzar Jaaey  Ga

Woh Jab Aaey  Ga To Phir Uski Rafaaqat K Liay

Mousam   e   Gul Miray Aangan Men Thahar Jaaey Ga

Aakhrish Woh Bhi Kahin Rait Pe  Bethi Ho Gi

Tera Yeh Pyar Bhi Dar ya Ha y Utar Jaaey Ga

Mujh ko Taihzeeb K  Barzakh Ka  Banaaya   Waaris

Jurm Yeh Bhi Meray Ajdaad K  Sar Jaaey  Ga

Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -