گئے موسم میں جو کھِلتے تھے گلابوں کی طرح

گئے موسم میں جو کھِلتے تھے گلابوں کی طرح
گئے موسم میں جو کھِلتے تھے گلابوں کی طرح

  

گئے موسم میں جو کھِلتے تھے گلابوں کی طرح

دل پہ اُتریں گے وہی خواب عذابوں کی طرح

راکھ کے ڈھیر پہ اب رات بسر کرنی ہے

جل چکے ہیں مرے خیمے،مرے خوابوں کی طرح

ساعتِ دید کے عارض ہیں گلابی اب تک

اولیں لمحوں کے گُلنار حجابوں کی طرح

وہ سمندر ہے تو پھر رُوح کو شاداب کرے

تشنگی کیوں مجھے دیتا ہے سرابوں کی طرح

غیر ممکن ہے ترے گھر کے گلابوں کا شمار

میرے رِستے ہُوئے زخموں کے حسابوں کی طرح

یاد تو ہوں گی وہ باتیں تجھے اب بھی لیکن

شیلف میں رکھی ہُوئی کتابوں کی طرح

کون جانے نئے سال میں تو کس کو پڑھے

تیرا معیار بدلتا ہے نصابوں کی طرح

شوخ ہو جاتی ہے اب بھی تری آنکھوں کی چمک

گاہے گاہے،ترے دلچسپ جوابوں کی طرح

ہجر کی سب،مری تنہائی پہ دستک دے گی

تیری خوشبو ،مرے کھوئے ہوئے خوابوں کی طرح

شاعرہ: پروین شاکر

         Gaey  Maosam Men Jo Khilty Thay Gulaabon Ki Tarah

                               Dil Pe Utren Gay Wohi Kha ab  Azaabon Ki Tarah

                                                            Raakh K Dhair Pe Ab Raat Basr Karni hay

Jall Chuky Hen Meray khaimay  Miray Kh aabon Ki Tarah

                                                                 Saat   e Deed K Aariz hen Gulaabi Ab Tak

                                  Awalleen Lamhon K Gulnaar  Hijaabon Ki Tarah

                                Wo Samandr Hay To Phir Rooh Ko Shadaab Kary

                         Tishnagi Kiun Mujhy Deta HaY  SaraabonKi Tarah

Ghair Mumkin Hay  Teray  Ghar K Gulaabon Ka Shumaar

                       Meray Ristay Huay Zakhmon K Hisaabon Ki Tarah

                                         YaadTo Hongi Wo Baaten Tujhy Ab Bhi  Lekin

                                      Shailf  Men Rakhi Hui Band Kitaabon Ki Tarah

                      Kon Jaany Keh  Naey Saal Men Tu Kiss Ko Parrhay

                                                 Tera  Mayaar  Badlta Hay Nisaabon Ki Tarah

              Shokh Ho Jaati Hay Ab Bhi Tiri Aankhon Ki Chamak

                           Gaahy Gaahy Tiray  Dilchasp  Jawaabon Ki Tarah

                                          Hijr Ki Shab Miri Tanaahai Pe Dastak Day Gi

         Teri Khushbu,MIray Khoay  Huay  Khaabon  Ki Tarah

Poetess:Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -