کمال ضبط کو خود بھی تو آزماؤں گی

کمال ضبط کو خود بھی تو آزماؤں گی
کمال ضبط کو خود بھی تو آزماؤں گی

  

کمال ضبط کو خود بھی تو آزماؤں گی

میں اپنے ہاتھ سے اُس کی  دلہن سجاؤں گی

سپرد کر کے اسے جاندنی کے ہاتھوں میں

میں اپنے گھر کے اندھیروں کو لوٹ آؤں گی

بدن کے کرب کو وہ بھی سمجھ نہ پاۓ گا

میں دل میں روؤں گی، آنکھوں میں مسکراؤں گی

وہ کیا گیا رفاقت کے سارے لطف گئے

میں کس سے روٹھ سکوں گی، کسے مناؤں گی

اب اُس کا فن تو کسی اور منسوب ہوا

میں کس کی نظم اکیلے میں گنگناؤں گی

وہ ایک رشتہ بے نام بھی نہیں لیکن

میں اب بھی اسکے اشاروں پہ سر جھکاؤں گی

بجھا دیا تھا گلابوں کے ساتھ اپنا وجود

وہ سو کے اٹھے تو خوابوں کی راکھ اٹھاؤں گی

سماعتوں میں گھنے جنگلوں کی سانسیں ہیں

میں اب کبھی تری آواز سن نہ پاؤں گی

جواز ڈھونڈ رہا تھا نئی محبت کا

وہ کہہ رہا تھا میں اسکو بھول جاؤں گی

شاعرہ: پروین شاکر

Kamaal Zabt Ko Khud Bhi  To Aazmaaun Gi

Main Apnay Haath Say Uss Ki dulhan Sajaaun Gi

Sapurd Kr K Usay Chaandni K Haathon Men

Main Apnay Ghar K Andhairon Ko Laot Aaun Gi

Badan K Karb Ko Wo Bhi Samajh Na Paaey Ga

Main Dil Men Roun Gi , Aankhon Men Muskaraaun Gi

Wo Kaya Gia Keh Rafaaqat  K Saaray Lutf Gaey

Main Kiss Say Roothun Gi, Kissay Manaaun Gi

Ab Uss Ka Fann To Kisi Aor Say Hua Mansoob

Main Kiss Ki Nazm Akailay Men Gunganaaun Gi

Wo Aik Rishta Benaam  Benaam Bhi Nahen Lekin

Main Ab Bhi Uss K Ishaaron Pe Sar Jhukaaun Gi

Bujha Dia Tha Gulaabon K Saath Apna Wajood

Wo So K Uthay To Khaabon Ki Raakh Uthaaun Gi

Samaaton Men Ghanay Jangalon Ki Saansen Hen

Main Ab Kabhi Tiri Awaaz Sun Na Paaun Gi

Jawaaz Dhoond Raha Tha Nai Muhabbat Ka

Wo KEh Raha Tha Keh Main Uss Ko Bhool Jaaun Gi

Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -