موسم کا عذاب چل رہا ہے

موسم کا عذاب چل رہا ہے
موسم کا عذاب چل رہا ہے

  

موسم کا عذاب چل رہا ہے

بارش میں گلاب جل رہا ہے

پھر دیدہ و دل کی خیر یارب!

پھر ذہن میں خواب پل رہا ہے

صحرا کے سفر میں کب ہوں

تنہا ہمراہ سراب چل رہا ہے

آندھی میں دُعا کو بھی نہ اُٹھا

یوں دستِ گُلاب شل رہا ہے

کب شہرِ جمال میں ہمیشہ

وحشت کا عتاب چل رہا ہے

زخموں پہ چھڑک رہا ہے خوشبو

آنکھوں پہ گلاب مَل رہا ہے

ماتھے پہ ہَوانے ہاتھ رکھے

جسموں کو سحاب جھل رہا ہے

موجوں نے وہ دُکھ دیے بدن کو

اب لمسِ حباب کَھل رہا ہے

قرطاسِ بدن پہ سلوٹیں ہیں

ملبوسِ کتاب ،گل رہا ہے

شاعرہ: پروین شاکر

                        Mosam Ka Azaab Chall Raha Hay

                      Baarish Men Gulaab Jall Raha Hay

                          Phir Deeda  o  Dil Ki Khair Ya Rab

           Phir Zehm Men Khaab Pall Raha Hay

                   Sehr a K Safar Men Kab Hon Tanha

                           Hamraah Saraab Chall Raha Hay

                          Aandhi Men Dua Ko Bhi Na Utha

                       Yun Dast  e Gulaab Shall Raha Hay

                       Kab Sheh  e  Jamaal Men Hamesha

                             Whshat Ka Utaab Hall Raha Hay

Zakhmon Pe Chirrak Rah hay Khushboo

                   Aankhon Pe Gulaab Mall Raha Hay

          Maathay Pe Hawa Nay Haath Rakhay

                        Jismon Ko Sahaab Jhall Raha Hay

       Maojon Nay Wo Dukh Diay Badan Ko

                     Ab lams  e  Habaab Khall Raha Hay

                        Qirtaas  e  Badan Pe Salwaten Hen

                        Malboos  e  Kitaab Gall Raha Hay

Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -