ڈسنے لگے ہیں خواب مگر کِس سے بولیے

ڈسنے لگے ہیں خواب مگر کِس سے بولیے
ڈسنے لگے ہیں خواب مگر کِس سے بولیے

  

ڈسنے لگے ہیں خواب مگر کِس سے بولیے

میں جانتی تھی، پال رہی ہوں سنپولیے

بس یہ ہُوا کہ اُس نے تکلّف سے بات کی

اور ہم نے روتے روتے دوپٹے بھگو لیے

پلکوں پہ کچی نیندوں کا رَس پھیلتا ہو جب

ایسے میں آنکھ دُھوپ کے رُخ کیسے کھولیے

تیری برہنہ پائی کے دُکھ بانٹتے ہُوئے

ہم نے خُود اپنے پاؤں میں کانٹے چبھو لیے

میں تیرا نام لے کے تذبذب میں پڑ گئی

سب لوگ اپنے اپنے عزیزوں کو رو لیے!

’’خوشبو کہیں نہ جائے‘‘ یہ اصرار ہے بہت

اور یہ بھی آرزو کہ ذرا زُلف کھولیے

تصویر جب نئی ہے ، نیا کینوس بھی ہے

پھر طشتری میں رنگ پُرانے نہ گھولیے

شاعرہ: پروین شاکر

                        Dasnay Lagay Hen Khaab Magar Kiss Say Boliay

                                                         Main Jaanti Thi Paal Rahi Hun Sanpoliay

                               Bass Ye Hua Keh Uss Nay Takalluff  Say Baat Ki

                           Aor Ham Nay Rotay RoTay Dupattay Bhigo Liay

                          Palkon Pe Kachi Neendon Ka Rass Phailta Ho Jab

                        Aisay Men Aankh Dhoop K Rukh Kaisay   Kholiay

                                                       Teri  Barehna Paaee K Dukh Baantay Huay

Ham Nay Khud Apnay Paaon Men Kaantay Chabho Liay

                                     Main Tera Name Lay K Tazabzub Men Parr Gai

                                                 Sab Log Apnay Apnay Azeezon Ko Ro Liay

                                      Khushboo Kahen Na JaaeyPe Israar Hay Bahut

                                                   Aor Yeh Bhi Aarzoo Keh Zara Zulf Kholiay

                                                   Tasveer Jab nai Hay Naya Kainwas Bhi Hay

                                          Phir Tashtari Men Rang Puraanay Na Gholiay

  

                                                                                                                      Poeteess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -